مقبول خبریں
راچڈیل، ساہیوال جیسے شہروں کے رشتے کو مثالی بنایا جائیگا: ممبر پنجاب اسمبلی ندیم کامران
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
ہم نے سچ کو دیکھا ہے جھوٹ کے جھروکوں سے!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مختلف مواقع پرمسلم کمیونٹی کا احساس ذمہ داری وباہمی اتفاق قابل تحسین ہے: خالدمحمودایم پی
برمنگھم... پیری بار برمنگھم سے رکن برطانوی پارلیمنٹ خالد محمود نےکہا ہےکہ میں عیدا لفطر کے موقع پر چاند کے مسئلے پر مسلم کمیونٹی کا اتفاق رائے اور پھر برمنگھم میں ہونے والے ای ڈی ا یل کے مظاہرے کے موقع پر مسلم کمیونٹی کا احساس ذمہ داری وباہمی اتفاق قابل تحسین ہے ۔ انہوں نےمرکزی جماعت اہل سنت برطانیہ کے زیر اہتمام یکم ستمبر کو ہونے والی عالمی تاجدار ختم نبوت اور تحفظ مقام مصطفی کانفرنس کابھی خیر مقدم کیا اور مسلمانوں کے اتحاد واتفاق اور یکجہتی کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کانفرنس کے اغراض ومقاصد اور افادیت کی تعریف کی ہے۔انہوں نے کہا مجھے یہ جان کر خوشی ہوئی ہے کہ مرکزی جماعت اہلسنت برطانیہ کی کانفرنس برمنگھم شہر میں یورپ کی سب سے بڑی مرکزی جامع مسجد بلگریوروڈ میں منعقد ہورہی ہے جس میں برطانیہ بھر سے مسلمانوں کی بڑی تعداد شریک ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ آج دنیا بھر میں جہاں مسلمانوں کوہر سطح پر ہر ملک اور علاقے میں اتحاد اور باہمی ہم آہنگی کی ضرورت ہے وہاں خاص طورپر یورپ میں بسنے والے مسلمانوں کو بھی یورپ کے مخصوص اور مختلف حالات طرز زندگی اور سماجی وثقافتی پس منظر کی وجہ سے یہاں مسلمانوں کو زیادہ فعال اور منظم ہوکر آگے بڑھنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں نے ہمیشہ اس بات پر زور دیا ہے کہ برطانیہ میں مسلم کمیونٹی کو بہرصورت فرقہ پرستی اور فروغی اختلافات سے دور رہ کر کام کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہاس سلسلے میں برطانوی حکومت مسلم کمیونٹی کے اجتماعی مفادات، ضروریات اور مستقبل میں ہمیشہ کی طرح اب بھی معاون ثابت ہوگی۔