مقبول خبریں
دار المنور گمگول شریف سنٹر راچڈیل میں جشن عید میلاد النبیؐ کے حوالہ سےمحفل کا انعقاد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
حکومت ہند کوقائد اعظم سمیت تمام پاکستانی لیڈروں کی آزادی سے قبل کی تقاریر عام کرنے کا حکم
نئی دہلی ...انڈین رائٹ ٹو انفارمیشن محکمے کے چیف کمشنر نے ایک درخواست پر سماعت کرتے ہوئے حکومت کو حکم دیا ہے کہ 1947سے پہلے کی تمام پاکستانی رہنماؤں کی تقاریر کو عام کیا جاے۔ اب تک بھارتی حکومت یہ کہہ کر ان تقاریر کوعام کرنے سے گریز کرتی رہی ہے کہ اس سے دونوں ملکوں کے تعلقات پر اثر پڑ سکتا ہے۔ چیف انفارمیشن کمشنر ستيانند مشرا نے اپنے فیصلے میں کہا کہ کسی بھی سرکاری افسر کے لیے یہ کہہ دینا آسان ہے کہ پاکستان چلے جانے والے رہنماؤں سے متعلق کسی بھی معلومات کو خفیہ رکھنا چاہیےلیکن یہ ایک پیچھے لوٹنے والا قدم ہوگا۔ ستيانند مشرا نے کہا کہ عام آدمی اور تاریخ کے طلباء کی ہندوستانی تاریخ کے اس انتہائی دلچسپ پہلو کے بارے میں جاننے میں ہمیشہ دلچسپی رہی ہے، اس لیے یہ حکومت کا فرض ہے کہ وہ تقاریر کے ایسے تمام ریکارڈز کو عوام کو مفت فراہم کرے۔ اس سے پہلے حکومت نے دفعہ 8 (1) (a) کا حوالہ دیتے ہوئے یہ ریکارڈ دینے سے انکار کر دیا تھا۔ پٹیشنر سبھاش اگروال کا کہنا ہے کہ محمد علی جناح کی تقاریر سے یہ سچ سامنے آ جائے گا کہ پاکستان کے بانی کے خوابوں کا پاکستان نہیں بنا، بلکہ ایک قدامت پسند پاکستان بن کر رہ گیا ہے۔