مقبول خبریں
پاکستانی کمیونٹی سنٹر اولڈہم میں بیڈمنٹن ٹورنامنٹ کا انعقاد، برطانیہ بھر سے 20 ٹیموں کی شرکت
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
حکومت ہند کوقائد اعظم سمیت تمام پاکستانی لیڈروں کی آزادی سے قبل کی تقاریر عام کرنے کا حکم
نئی دہلی ...انڈین رائٹ ٹو انفارمیشن محکمے کے چیف کمشنر نے ایک درخواست پر سماعت کرتے ہوئے حکومت کو حکم دیا ہے کہ 1947سے پہلے کی تمام پاکستانی رہنماؤں کی تقاریر کو عام کیا جاے۔ اب تک بھارتی حکومت یہ کہہ کر ان تقاریر کوعام کرنے سے گریز کرتی رہی ہے کہ اس سے دونوں ملکوں کے تعلقات پر اثر پڑ سکتا ہے۔ چیف انفارمیشن کمشنر ستيانند مشرا نے اپنے فیصلے میں کہا کہ کسی بھی سرکاری افسر کے لیے یہ کہہ دینا آسان ہے کہ پاکستان چلے جانے والے رہنماؤں سے متعلق کسی بھی معلومات کو خفیہ رکھنا چاہیےلیکن یہ ایک پیچھے لوٹنے والا قدم ہوگا۔ ستيانند مشرا نے کہا کہ عام آدمی اور تاریخ کے طلباء کی ہندوستانی تاریخ کے اس انتہائی دلچسپ پہلو کے بارے میں جاننے میں ہمیشہ دلچسپی رہی ہے، اس لیے یہ حکومت کا فرض ہے کہ وہ تقاریر کے ایسے تمام ریکارڈز کو عوام کو مفت فراہم کرے۔ اس سے پہلے حکومت نے دفعہ 8 (1) (a) کا حوالہ دیتے ہوئے یہ ریکارڈ دینے سے انکار کر دیا تھا۔ پٹیشنر سبھاش اگروال کا کہنا ہے کہ محمد علی جناح کی تقاریر سے یہ سچ سامنے آ جائے گا کہ پاکستان کے بانی کے خوابوں کا پاکستان نہیں بنا، بلکہ ایک قدامت پسند پاکستان بن کر رہ گیا ہے۔