مقبول خبریں
پاکستان کا دورہ انتہائی کامیاب رہا ،ممبر برطانوی پارلیمنٹ ٹونی لائیڈ و دیگر کی پریس کانفرنس
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف جنگ کا کردار ادا کرنے کی سزا دی جا رہی ہے : لارڈ قربان حسین
لوٹن ... لوٹن ٹائون ہال کے باہر پشاور کے شہداء کی یاد میں لوٹن کونسل آف فیتھس کے زیر اہتمام ایک وجل کا اہتمام کیا گیا، جس میں مختلف مذاہب کے نمائندگان نے شہدا کو زبردست خراج پیش کیا اور واقعہ میں ملوث دہشت گردوں کی سخت مذمت کی اور دعا کی کہ پاکستان دہشت کردی کے خاتمے میں کامیاب ہو۔ اس موقع پر ٹائون ہال کے باہر شمعیں جلائی گئیں اور دو منٹ کی خاموشی بھی اختیار کی گئی۔ مسلمانوں کے علاوہ ہندو، بدھ، کویکر، سکھ، یہودی، جین، عیسائی اور بہائی مذاہب کے رہنمائوں نے اظہار خیال کیا۔ جن میں عیسائی مذہب کے ڈیکن پیٹر آدم، سکھ مذہب کے جسوندر ناگرہ، ہندوئوں کے نمائندہ ناٹو بھائی سولنگی، کویکر رکی جولی، بچر، مسلمانوں کے نمائندے علامہ قاضی عبدالعزیز چشتی، جین مذہب کے سریت جین نے خطاب کیا۔ چیئرمین ظفر خان نے ابتدائیہ جملے ادا کئے۔ کونسل لیڈر ہیزل سمنز، کونسلر خدیجہ ملک نے بھی خطاب کیا۔ جبکہ کوآرڈینیٹر ڈیوڈ جانتھن نے نظامت کے فرائض انجام دیئے۔ وجل میں لارڈ قربان حسین، میئر محمد فاروق بلڈنگ برجز کے سربراہ راجہ اکبر داد خان، کونسل ریاض بٹ، کونسلر راجہ سلیم، ڈاکٹر نازیہ خانم، سید تحسین گیلانی، اعظم شاہ، چوہدری محمد شریف، ملک اعجاز، ممتاز بٹ، شبیر ملک سمیت 100کے قریب مختلف شعبہ ہائے زندگی سے متعلق افراد نے شرکت کرکے شہداء پشاور کو خراج پیش کیا۔ وجل میں شریک دارالامراء کے ممبر لارڈ قربان حسین نے کہا کہ پشاور میں معصوم بچوں کا قتل یہ درندگی اور سفاکی کی انتہا ہے پاکستان کو دہشت گردی کے خلاف جنگ میں فرنٹ لائن ریاست کا کردار ادا کرنے کی سزا دی جا رہی ہے۔ مغرب کو چاہئے کہ وہ اس صورتحال میں پاکستان کی خدمات کا اعتراف کرکے اس کی بھرپور امداد کرے۔ انہوں نے کہا کہ اس واقعہ میں ملوث لوگ اسلام تو دور کی بات ہے انسانیت کے بھی دشمن ہیں، جن کا قلع قمع کیا جانا ہر صورت میں ضروری ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس واقعہ کے بعد جو یکجہتی کی فضا قائم ہوئی ہے یہ ایک اہم پیش رفت ہے۔