مقبول خبریں
چوہدری سعید عبداللہ ،چوہدری انور،حاجی عبدالغفار کی جانب سے حاجی احسان الحق کے اعزاز میں عشائیہ
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
نکیال سیکٹرمیں بھارتی فوج کی بلااشتعال گولہ باری سے ایک خاتون ہلاک اور نو افراد زخمی
کوٹلی ... آزاد کشمیرکے نکیال سیکٹرمیں بھارتی فوج کی بلااشتعال گولہ باری سے ایک خاتون ہلاک اور نو افراد زخمی ہوگئے۔ ریڈیو پاکستان نے ڈپٹی کمشنر کوٹلی مسعود الرحمن کے حوالے سے بتایا کہ بھارتی فوج کی جانب سے سنیچر کی رات گئے بلا اشتعال گولہ باری کی گئی۔ ڈپٹی کمشنر کوٹلی کے مطابق بھارتی افواج نے لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کرتے ہوئے شہری آبادی پر براہِ راست گولہ باری کی۔ ان کا کہنا تھا کہ بھارتی فوج کی گولہ باری سے ایک خاتون ہلاک جبکہ نو افراد زخمی ہو گئے۔ پاکستان کے مقامی میڈیا کے مطابق بھارتی فوج کی گولہ باری اور فائرنگ سے ایک گھر اور دو گاڑیاں مکمل طور پر تباہ ہو گئیں۔ دونوں ملکوں کے درمیان کشمیر کو تقسیم کرنے والی لائن آف کنٹرول پر حالیہ ہفتوں میں ایک بار پھر کشیدگی دیکھنے میں آئی ہے۔ رواں ماہ کے اوائل میں بھارت نے الزام عائد کیا تھا کہ پاکستانی فوجیوں نے فائرنگ کرکے اس کے پانچ فوجیوں کو ہلاک کردیا لیکن پاکستان نے اسے مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایسا کوئی واقعہ پیش ہی نہیں آیا۔ پاکستانی سکیورٹی فورسز کا دعویٰ ہے کہ بھارت کی طرف سے رواں ماہ 30 سے زائد مرتبہ فائر بندی کی خلاف ورزی کی گئی ہے جس میں اس کے دو فوجیوں سمیت پانچ شہری ہلاک اور متعدد زخمی ہوچکے ہیں۔ دونوں ہمسایہ ایٹمی قوتوں کے درمیان متعدد تصفیہ طلب معاملات کے باعث اکثروبیشتر تعلقات تناؤ کا شکار ہو جاتے ہیں اور ان معاملات میں کشمیر ایک اہم موضوع ہے۔ پاکستان کی نو منتخب حکومت لائن آف کنٹرول پر پیدا ہونے والی صورتحال پر بھارت سے سفارتی سطح پر احتجاج کرتے ہوئے کہہ چکی ہے کہ وہ اس پر تحمل اور ذمہ داری کا مظاہرہ کر رہی ہے جسے کسی طور پر کمزوری نہیں سمجھا جانا چاہیے۔ حالیہ کشیدگی کے باوجود خصوصاً وزیراعظم نواز شریف کی طرف سے ایسے بیانات سامنے آئے ہیں جن میں تعلقات میں تناؤ کو کم کرکے اچھے تعلقات استوار کرنے کی بات کی گئی ہے۔