مقبول خبریں
یوم عاشور کے حوالہ سے نگینہ جامع مسجد اولڈہم میں روح پرور،ایمان افروز محفل کا اہتمام
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
سترہ سال کی عمر میں نوبل انعام وصول کرکے ملالہ یوسف زئی نے ورلڈ ریکارڈ قائم کردیا
اوسلو ...قوم کی17سالہ بہادربیٹی ملالہ یوسفزئی کوناروے کے دارالحکومت کے سٹی ہال میں ایک پروقارتقریب کے دوران امن کے نوبل انعام نوازدیاگیاجبکہ انکے ہمراہ بھارت کے کیلاش ستھیارتی نے اعزاز وصول کیا،نوبیل کمیٹی نے ملالہ اورکیلاش کاخیرمقدم کیاجبکہ چیئرمین کمیٹی تھورجون جیگ لینڈکاکہناتھاکہ تشددکی کسی مذہب میں اجازت نہیں، ملالہ اورستیارتھی امن کے علمبردارہیں، ملالہ کے بلاگ میں سوات کے حالات بتائے جاتے تھے ،انہیں طالبان نے زخمی کیاجبکہ وہ امن کانوبیل انعام حاصل کرنیوالی سب سے کم عمرفرد ہے ،ادھرکیلاش نے چائلڈ لیبرکیخلاف شعوراجاگرکیا۔ جیگ لینڈنے کہا کہ طالبان اوردوسری شدت پسند تنظیمیں تعلیم کی راہ میں رکاوٹ ہیں، پاکستان میں تعلیمی نظام بہترکرکے بہت کچھ درست کیا جاسکتاہے ،ملالہ اور کیلاش کی جدوجہد دنیا بھرکیلئے مشعل راہ ہے ،ہمیں ان جیسے عظیم لوگوں کی ضرورت ہے ۔ ملالہ یوسفزئی نے خطاب میں کہا کہ قرآن پاک کاپہلا لفظ’اقراء‘پڑھنے کی ترغیب دیتاہے ، دہشت گردوں نے اسلام کے نام کاغلط استعمال کیا،دہشت گردوں نے ہمیں روکنے کی کوشش کی،مجھ پراورمیری سہیلیوں شازیہ اورکائنات کو بھی فائرنگ کانشانہ بنایا،میں اکیلی نہیں،6کروڑ 60 لاکھ بچوں کی آواز ہوں،میں ملالہ،شازیہ اورکائنات بھی ہوں،آج ہماری آواز مزید توانا اور بلند ہوگئی ہے ،میرے پاس دو راستے تھے ،چپ رہ کر مارے جانے کا انتظار کرتی یا آواز اٹھاتی تومیں نے طالبان کیخلاف بولنے کا فیصلہ کیا اورپھردہشت گرد ناکام اورہم کامیاب ہوئے ، طالبان کا نظریہ جیتا نہ ہی انکی گولیاں کامیاب ہو سکیں۔ملالہ کاکہناتھاکہ پاکستان سمیت بہت سے ممالک میں بچے تعلیم کے حق سے محروم ہیں،غربت اورجنگ کی وجہ سے شام،عراق ،فسلطین اور افغانستان کے لاکھوں بچے اوربچیاں سکول نہیں جارہیں،اسلحہ فراہم کرنا آسان لیکن کتاب دینا مشکل کیوں؟ ٹینک بنانا آسان ہے لیکن سکول نہیں بنائے جاتے ،خودعالمی رہنماؤں کے بچے اچھے سکول میں جاتے ہیں،ہمیں انتظار کی بجائے فروغ تعلیم کیلئے کام کرنا ہو گا ،وقت آگیا ہے کہ عالمی رہنماوں کوفروغ تعلیم کیلئے کہاجائے ،ہم عصر جدید میں رہ رہے ہیں ،ہمارے لئے کچھ بھی ناممکن نہیں ،یہ آخری موقع ہونا چاہئے کہ کوئی لڑکی یا لڑکا اپنا بچپن فیکٹری میں کھو دے ،یہ وقت ڈرنے کا نہیں بلکہ عملی طور پر کچھ کر دکھانے کا ہے ،میں یہ ایوارڈ ان تمام بچوں کے نام کرتی ہوں جو تبدیلی اورامن چاہتے ہیں جبکہ نوبل انعام کی رقم’ملالہ فنڈ‘کیلئے ہے ،اس رقم سے پاکستان میں معیاری سکول بنائے جائینگے ۔ملالہ نے مزیدکہاکہ دنیا میں امن چاہتی ہوں، ہر بچے کے سکول جانے تک جدو جہد جاری رکھوں گی ،2 بار وزیر اعظم بننے والی شخصیت بے نظیر بھٹو سے متاثر ہوں،افسوس ہے کہ پاک بھارت وزراء اعظم تقریب میں شریک نہیں تاہم جو قدم میں نے اور کیلاش ستیارتھی نے اٹھایا ہے وہ تبدیلی لائیگا ۔بعدازیں کیلاش ستیارتھی نے کہا کہ ترقی کے سفرمیں دنیاکے کسی حصے میں کوئی پیچھے نہ رہ جائے ، اپنا نوبل انعام ان لاکھوں کروڑوں بچوں کے نام کرتاہوں جن کابچپن چھین لیاگیا، دنیابھرمیں پس ماندہ بچے ہمارے اپنے بچے ہیں، بچے سوال کرتے ہیں کہ کیادنیااتنی غریب ہے کہ انھیں ایک کھلونابھی نہیں دے سکتی؟۔ تقریب کے دوران مشرقی رنگ چھایارہا،پاکستان کے نامورقوال راحت فتح علی خان نے خصوصی پرفارمنس دی اورجب انہوں نے ’اللہ ہو‘ کی صدابلندکی تو ہال میں ہر طرف خاموشی چھا گئی،حاضرین نے راحت فتح علی خان کے فن کو دل کھول کر داد دی جبکہ بھارت کے ستار نواز استاد امجد علی خان نے بھی اپنا ہنر دکھایا،انکی انگلیوں نے ستارکے تاروں پرسر چھیڑے تو مشرقی ساز کا جادو مغرب والوں کے سر چڑھ کر بولنے لگا، ملالہ کے پسندیدہ گلو کارسردار علی ٹکر نے پشتو میں نغمہ بھی سنا یا، واضح رہے کہ نوبل امن انعام کا آغاز 1901ء میں ہوااوریہ پہلا موقع ہے کہ قوالی بھی اسکی تقریب کا اہم حصہ بنی۔دوران تقریب میکسیکو کے ایک فوٹو گرافر نے اسٹیج پر آکر ملالہ کو اپنے ملک کا جھنڈا دینے کی کوشش کی اسکا کہنا تھا کہ میکسیکو میں عوام کیساتھ بہت ظلم ہورہا ہے آپ اسے بھی دنیا کے سامنے لائیں، سیکیورٹی حکام نے اس شخص کو فوری طور پر گفرتار کر کے کمرے سے نکال دیا۔