مقبول خبریں
پاکستان کا دورہ انتہائی کامیاب رہا ،ممبر برطانوی پارلیمنٹ ٹونی لائیڈ و دیگر کی پریس کانفرنس
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مذہب، علاقائیت اور ذات برادری کی تقسیم سے باہر نکل کر ہمیں ووٹ قابلیت کو دینا ہوگا: بیرونس وارثی
بریڈفورڈ ...سیاسی زندگی میں اصولوں کو بڑی اہمیت حاصل ہوتی ہے، اصول اقتدار کیلئے نہیں ہونے چاہیئں لیکن اصولوں کیلئے اقتدار کو قربان کرنے والے ہی تاریخ میں نام کماتے ہیں۔ اگر آ پ کے اصول ہیں تو آپ ان کی طاقت سے اقتدار حاصل کر سکتے ہیں لیکن اگر آپ اقتدار کے لئے اپنے اصول قربان کردیں تو خود اپنی نظروں سے گر جاتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار حکمران ٹوری پارٹی کی رہنما سابق وزیر بیرونس سعیدہ وارثی نے بریڈفورڈ ایسٹ سے آئندہ عام انتخابات کے لئے کنزرویٹو پارٹی کے پارلیمانی امیدوار افتخار احمد کے انتخابی دفتر کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ا نہوں نے کہا کہ میں غزہ کے لئے اس لئے آواز بلند نہیں کرتی کہ میں مسلمان ہوں۔ الحمدللہ وہ تو میں ہوں لیکن یہ مسئلہ مسلمانوں کا نہیں انسانیت کا مسئلہ ہے میں خود اڑھائی برس تک انسانی حقوق کی برطانوی وزیر رہی ہوں اور اس لحاظ سے دنیا بھر میں گھوم کر انسانی حقوق کا پرچار کرتی رہی ہوں پھر یہ کیسے ممکن ہے کہ غزہ کا مسئلہ سامنے آئے تو میں سارے اصول اور اپنے دعویٰ بھلا کر حکومتی آواز میں اپنی آواز شامل کرلوں۔ یہ مجھ سے نہیں ہو سکتا اور میں نے ایسا ہی کیا اور جس پارٹی نے مجھے کیبنٹ روم تک رسائی دی اسی پارٹی کی غزہ پالیسی کی مخالفت کی۔ انہوں نے کہا کہ لوگ تو اپنے مفادات کے لئے اپنا مذہب تک تبدیل کر لیتے ہیں لیکن میں پاور نہیں اصولوں پر یقین رکھتی ہوں۔ انہوں نے ٹوری امیدوار افتخار احمد کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ آپ افتخار کو اس لئے ووٹ نہ دیں کے وہ مسلمان ہے بلکہ اس کی اس لئے حمایت کریں کہ وہ ایک بہتر امیدوار ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں مذہبی،علاقائی اور ذات برادری کی تقسیم سے باہر نکلنا ہوگا اور مذہب کو بنیاد بنانے کی بجائے اعلیٰ اقدار کو امیدوار کے انتخاب کے لئے استعمال کرنا ہوگا۔ بریڈ فورڈ ایسٹ ٹوری پارٹی کے چیئرمین محمد ریاض کی صدارت میں ہونے والی اس تقریب سے پارٹی کے سینئر رہنما راجہ نجابت حسین پڈسی سے رکن پارلیمنٹ سٹیورٹ اینڈریو، بریڈ فورڈ ویسٹ سے ٹوری کے متوقع امیدوار جارج گرانٹ، پاکستان کلب کے صدر بشارت علی، راجہ اے ڈی خان، بریڈ فورڈ کنزرویٹو پارٹی کے چیئرمین بیری وٹیکر اور محمد ریاض اور پارلیمانی امیدوار افتخار احمد نے خطاب کیا جبکہ چوہدری کرامت حسین نے صوفیانہ کلام سیف الملوک پڑھا۔ تقریب کی نظامت راجہ نجات حسین نے کی۔ انہوں نے مہمان خصوصی کو خوش آمدید کہتے ہوئے ان کی جدوجہد کی تعریف کی پارلیمانی امیدوار افتخار احمد نے کہا کہ لیبر اور لبرل نے مل کر گزشتہ 25برس سے اس حلقہ کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ دونوں طرف سے علاقہ اور عوام علاقہ کی خدمت کے دعویٰ کئے جا رہے ہیں جبکہ حقیقت یہ ہے کہ اس حلقہ میں 40فیصد لوگ بے روزگا ہیں۔ انہوں نے اعلان کیا کہ وہ منتخب ہونے کی صورت میں علاقہ کی بگڑی ہوئی معاشی اور اقتصادی حالت کی طرف خصوصی توجہ دیں گے اور بریڈ فورڈ ایسٹ کو نئی سرمایہ کاری کا گڑھ بنایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اگر آپ واقعی علاقہ کی قسمت بدلنا چاہتے ہیں تو آپ کو ٹوری پارٹی کو ووٹ دینا ہوگا۔ دیگر مقررین نے ایشیائی اور مسلم اقتدار کو ٹوری پارٹی کے زیادہ قریب قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہمیں ان مشترکہ اقدار کی فتح کے لئے ٹوری کی حمایت کرنا ہوگی۔ اس سے قبل جب سعیدہ وارثی وہاں پہنچیں تو پارٹی امیدوار افتخار احمد اور راجہ نجابت حسین نے اپنے ساتھیوں کے ہمراہ ان کا استقبال کیا جبکہ سعیدہ وارثی نے دفتر میں داخل ہونے سے قبل فیتہ کاٹ کر اس انتخابی دفتر کا افتتاح کیا۔ اس موقع پر حافظ عبدالقادر نوشاہی نے خصوصی دعا کروائی۔