مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
تحریک عدم اعتماد پارٹی کی مرکزی قیادت کے کہنے پر واپس لی: بیرسٹر سلطان محمود چوہدری
ڈربی ...آزاد کشمیر کے سابق وزیراعظم بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا ہے کہ ہمارے لئے بڑے فخر کی بات ہے کہ برطانیہ میں مقیم کشمیری یہاں پر اہم رول ادا کررہے ہیں، اس وقت آزاد کشمیر کے بسنے والے کئی لوگ یہاں برطانیہ میں ہاؤس آف لارڈز، ہاؤس آف کامنز کے رکن ہیں جبکہ بڑی تعداد میں یہاں پر لارڈ مئیرز اور مئیر ز جبکہ تین سو پچاس کے قریب کونسلرز ہیں جس سے یہ پتا چلتا ہے کہ کشمیری اب برطانوی معاشرے کا حصہ بن چکے ہیں اور یہاں اپنی حیثیت منوا رہے ہیں اوراپنے حقوق کے تحفظ کے ساتھ ساتھ کشمیر کی آزادی اور استحکام پاکستان کے لئے بھی اپنا کردار ادا کررہے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے ڈربی میں استقبالیہ کے موقع پر شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس کی صدارت چوہدری الطاف نے کی جبکہ استقبالیہ سے چوہدری افضل، کونسلر جہانگیر، کونسلر عاطف، چوہدری حنیف کالاڈب اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ بیرسٹر سلطان نے کہا کہ ڈربی میرا سیاسی قلعہ ہے اور یہاں مقیم کشمیریوں اور پاکستانیوں نے ہمیشہ میرا کھل کر ساتھ دیا اور ہمیشہ سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح میرے ساتھ کھڑے رہے۔ انہوں نے کہا ہم نے تحریک عدم اعتماد پیش کرکے عوامی جذبات کی ترجمانی کی تھی اور بعد ازاں پارٹی کی مرکزی قیادت کے کہنے پر واپس لی لہٰذا ہمیں یہ یاد رکھنا چاہیے کہ اگر آئینی اور جمہوری راستے بند کردیے جائیں تو پھر لوگ دیگر راستوں پر چل پڑتے ہیں۔ بیرسٹر سلطان نے کہا کہ بھارت نے لائن آف کنٹرول پر خلاف ورزیوں میں اضافہ کردیا ہے جبکہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی بھی عروج پر ہے ایسے موقع پر میں نے اپنا قومی فریضہ سمجھا کہ میں بھارت کا مکروہ چہرہ دنیا کے سامنے بے نقاب کروں جس کے لئے میں یورپ کے دورے کا فیصلہ کیا۔