مقبول خبریں
سیرت النبیؐ کے پیغام کو دنیا بھر میں پہنچانے کے لئے میڈیا کا کردار اہم ہے:پیر ابو احمد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد انتخابات کے خلاف کشمیر رابطہ کمیٹی کا بھارتی قونصلیٹ کے باہر مظاہرہ
برمنگھم ...بھارت نے چھ دہائیوں سے زائد عرصے سے جبر اور ظلم کے ذریعے کشمیریوں کو غلام بنا رکھا ہے اس پر مزید ستم یہ کہ دنیا کی آنکھوں میں دھول جھونک کر سلامتی کونسل کی مستقل رکنیت کا خواہشمند بھی ہے، مقبوضہ کشمیر میں آج ہونے والے انتخابات ایک ڈرامے کے سوا کچھ نہیں، مقبوضہ کشمیر سمیت دنیا بھر میں مقیم کشمیری انہیں نہیں مانتے اور دنیا کے منصفوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ بھی جاگیں اور دنیا کی مظلوم ترین قوم کو انکا وہ حق دلائیں جو دنیا میں انسانی حقوق کا سب سے معتبر ادارہ بھی مانتا تو ہے مگر عمل سے قاصر ہے۔ ان خیالات کا اظہار مقررین نے کل جماعتی کشمیر رابطہ کمیٹی کے زیر اہتمام برمنگھم میں بھارتی قونصلیٹ کے سامنے ایک احتجاجی مظاہرے میں کیا جسکی قیادت کمیٹی کے صدر راجہ امجد خان نے کی جبکہ کمیٹی میں شامل دیگر جماعتوں کے قائدین بھی انکے ہمراہ تھے جن میں تحریک کشمیر یورپ کے صدر محمد غالب، جمعیت علمائے مشائخ یوکے کے چیئرمین علامہ فضل احمد قادری، ورلڈ کشمیر فریڈم موومنٹ کے نذیر قریشی،تحریک کشمیر یوکے کے صدر یوکے کے صدر فہیم کیانی، پیپلز پارٹی کے چوہدری خادم حسین، چوہدری شعبان، چوہدری دلپذیر، مسلم لیگ ن یوتھ کے صدر راجہ حق نواز جانباز، لبریشن لیگ کے چوہدری ظفر، مسلم کانفرنس کے کونسلر چوہدری محمد فاضل، راجہ اسحاق صابرکے علاوہ نائب حسین مغل،چوہدری محمد حنیف، چوہدری اشتیاق لہڑی، چوہدری قربان، چوہدری اشفاق،چوہدری محمد مالک،ناظم گجر،محمد تنویر چوہدری،سہیل اقبال وفا،راجہ شہپال خان،چوہدری ظفر اقبال،ارشاد عزیز، صاحبزادہ رفیق چشتی، فدا حسین چارلی ،چوہدری شکیل،چوہدری اسلم، چوہدری غفور کھاڑک اور دیگر بھی شامل تھے۔ مظاہرین کا اپنے اپنے خطاب میں کہنا تھا کہ ایسے الیکشن کشمیری قوم کو ہر گز قبول نہیں جس سے ہماری خود مختاری کا استحصال ہو ہم کسی سازش سے کشمیر کی بندر بانٹ اور تفریق کو کسی قیمت پر قبول نہیں کریں گے۔کشمیری رہنماؤں کا کہنا تھا کہ جب تک کشمیر کے رہنے والوں کو اقوام متحدہ میں منظورقرارداوں کے تحت حق خوداردایت کا موقع نہیں ملتا تب تک بھارتی آئین کے تحت ہونے والے انتخابات کی کوئی حثیت نہیں انہوں نے نام نہاد انتخابات سے قبل ہی قابض انتظامیہ کی طرف سے حریت رہنماوں کی گرفتاری کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بھارت اس طرح کے انتخابی ڈراموں سے عالمی برادری کو اندھیرے میں رکھنے کی کوششیں کر رہا ہے کیونکہ عالمی دنیا پر یہ بات عیاں ہوچکی ہے کہ کشمیر ی ان نام نہاد الیکشن میں دلچسپی نہیں رکھتے ان انتخابات کا اصل مقصد جموں وکشمیر پر بھارتی فوج کے قبضے کو دوام بخشنا ہے ڈھونگ انتخابات میں حصہ لینے والی بھارت نواز جماعتیں بھی کشمیریوں کے خلاف سازش میں برابر کی شریک ہیں انہوں نے کہا کہ حریت کانفرنس کی جانب سے اس انتخابی ڈرامے کا بائیکاٹ اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ کشمیری اس عمل سے مکمل لاتعلقی کا اظہار کرتے ہیں عالمی برداری کو بھی چاہیے کہ وہ بھارت کے ان نام نہاد انتخابات کے بجائے کشمیریوں کے حق خودارایت کے لیئے دباؤ ڈالے ۔مقررین کا کہنا تھا کہ کشمیریوں نے مودی سرکار کے الیکشن ڈرامے کو مسترد کر دیا ہے اب وہ صرف اپنی ساکھ بچانے کی خاطر کشمیر میں انتخابی سرگرمیوں میں اچھل کود کر رہی ہے ۔مودی سرکار ا ن نام نہاد انتخابات میں کامیابی کا ڈھونگ رچا کر کشمیر میں گرفت مضبوط کرنے کی سازشیں کر رہی ہے انہوں نے کہا کہ بھارتی حکمران جو مرضی حربے اختیار کرلیں انہیں ایک نہ ایک دن کشمیریوں کو حق خوداریت دینا پڑے گا بھارت جب تک کشمیریوں کو بنیادی حقوق نہیں دیتا تب تک اسے جموری ملک ہونے کے دعووں سے اجتناب برتنا چاہیے۔ اس موقع پر برمنگھم کے بھارتی قونصلیٹ میں ایک یادداشت بھی پیش کی گئی جس میں بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کو مخاطب کرکے کہا گیا کہ یہ حقیقت بھارت سرکار کو ہمیشہ یاد رکھنی چاہیئے کہ کشمیریوں کا تسلیم شدہ حق خودارادیت اور اس سلسلے میں متعدد قراردادیں اقوام متحدہ کے دفاتر میں موجود ہیں ایسے میں مقبوضہ وادی مین انتخابات کشمیریوں کے حق خودارادیت کی نفی کرتے ہیں جسکا بھارت سرکار کو دنیا کا کوئی قانون اجازت نہیں دیتا۔ یادداشت میں مزید کہا گیا کشمیر میں ہونے والے مطالم پر دنیا بھر کے کشمیری پہلے ہی سراپا احتجاج ہیں، بھارت سرکار کو مقبوضہ کشمیر میں ریاستی ظلم کا شکار کشمیریوں پر بھی جبر و استحصال کا کوئی حق نہیں مگر اسکے باوجود وہ مسلسل ان خلاف ورزیوں کا مرتکب ہورہا ہے۔ کل جماعتی کشمیر رابطہ کمیٹی کی طرف سے بھارتی وزیر اعظم کو یہ بھی یاد دلایا گیا کہ مقبوضہ کشمیر کے سیلاب سے تباہ حال کشمیریوں کو آپ کے ان ڈھونگ انتخابات کی بالکل ضرورت نہیں ہے، انتخابات کی سیکیورٹی کے نام پر مظلوم کشمیریوں کی زندگی کو مزید اجیرن نہ بنایا جائے۔ سخت سردی کے باوجود کشمیریوں کی کثیر تعداد نے اس مطاہرے میں شرکت کی اور ڈھونگ انتضابات کے خلاف نعرے بازی کی۔ مظاہرین نے آزادی کے نعروں کی صدا بلندکرتے ہوئے بھارتی حکومت اور انڈین فوج کے خلاف بھی شدید نعرے بازی کی۔