مقبول خبریں
یوم عاشور کے حوالہ سے نگینہ جامع مسجد اولڈہم میں روح پرور،ایمان افروز محفل کا اہتمام
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
عمران خان لاشیں گرا کر اقتدار حاصل کرنا چاہتے ہیں مگر ایسا ممکن نہ ہوگا: سید خورشید شاہ
لوٹن ... پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنما اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر سید خورشید شاہ نے کہاہے کہ پاکستان میں عمران خان کو اقتدار دینا بندر کے ہاتھ میں تلوار دینے کے مترادف ہے۔ عمران خان چاہتے ہیں کہ کسی سہارے سے یا سڑکوں پر لاشیں گرا کر اقتدار حاصل کریں مگر ایسا ممکن نہیں۔ لیڈر کی اہمیت ہوتی ہے اور لیڈر باپ کی حیثیت رکھتاہے لیکن ہمارے آج کے لیڈر سٹیج پر چڑھ کر اپنی ماووں، بہنوں اور بیٹیوں کے سامنے کہتے ہیں کہ میں نے شادی کرنی ہے اور فوری طور پر رشتوں کی آفر بھی آجاتی ہے۔ اللہ پاک پاکستان کو ایسے لیڈروں سے بچائے۔ نوازشریف کبھی بھی استعفیٰ نہیں دیں گے۔ تمام مسائل کا حل مذاکرات میں ہیں اور پارلیمنٹ کے ذریعے سے اصلاحات ہوسکتی ہیں۔ بہت جلد قومی اسمبلی میں دوہری شہریت کے معاملے پر ایک بل لے کر آوں گا۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے لوٹن میں سیاسی۔سماجی شخصیت سید حسین شہید سرور کی جانب سے اپنے اعزاز میں استقبالیے سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ سید خورشید شاہ نے کہاکہ عمران خان کے قول و فعل میں بڑا تضاد ہے وہ جس کی تعریفیں کرتے ہیں۔ اس کے خلاف زہر بھی اگلتے ہیں۔ آج ایسی صورتحال ہے کہ کوئی جج کمیشن کا حصہ بننے کے لیے تیار نہیں۔ جس عمران خان نے الیکشن کے دوسرے روز ہسپتال میں میاں نوازشریف کو الیکشن میں کامیابی پر مبارکباد دی، آج وہ اسی الیکشن کو دھاندلی زدہ کہہ رہی ہیں اور اسی وزیراعظم سے استعفیٰ کا مطالبہ کررہے ہیں جبکہ ہم نے پہلے روز ہی کہہ دیاتھا کہ یہ الیکشن صاف و شفاف نہیں ہوئے، دھاندلی ہوئی ہے۔ انھوں نے کہاکہ ہمارے خلاف سب سےبڑی سازش کی گئی کہ ہمیں الیکشن مہم تک نہیں کرنے دی گئی۔ ہمیں طالبان کے خلاف آپریشن کی سزا ملی ہے مگر ہم نے ہمیشہ صبرو استقامت سے کام لیا اور سچائی کا دامن نہیں چھوڑا۔ انھوں نے کہاکہ آج کیوں ۹ ماہ سے پٹاخے نہیں پھٹ رہے۔ انھوں نے کہاہ میاں نوازشریف آج اپنے کئے کی سزا بھگت رہے ہیں۔ ہمارے دور میں انھوں نے بہت احتجاج کئے۔ حکومت کے خاتمے کی باتیں کیں۔ انھیں اقتدار میں آنے کی بڑی جلدی تھی، بڑے دعوے کئے جارہے تھے، چوبیس گھنٹوں میں بجلی لوڈشیڈنگ ختم کردی جائے گی، مہنگائی بھی جلد ختم ہوجائے گی مگر عملاً ہوا کچھ نہیں۔ آج اسی لئے دوسروں کو بات کرنے اور احتجاج کا موقع ملا ہے۔ سید خورشید شاہ نے کہاکہ آج ہمارا ہر لیڈر غریب کا نعرہ لگاکر غریب کو سیاسی مہرے کے طورپر استعمال کررہاہے، غریب کی صحیح معنوں میں بات شہید ذوالفقار علی بھٹو نے کی تھی۔ شہید بھٹو نے غریب، مزدور ور کسان کو اس کا حق دلوایا اور غریبوں کی عملی طور پر جنگ لڑی۔ انھوں نے کہاکہ پاکستان میں چھپن سال آمریت کا دور رہا مگر آج ہم سے سوال کئے جارہے ہیں کہ ملک کے لیے کیاکیاہے؟ آمروں سے کوئی کیوں نہیں پوچھتا کہ لیاقت علی خان اور ناظم الدین کو کس نے مارا تھا؟ ان کا کہناتھا کہ پینسٹھ سالوں کا جمہوری دور پورا کیاہے اور ایک طریقہ کار کے تحت اقتدار ایک صدر سے دورے صدر سونپاگیا اور ایک وزیراعظم سے دوسرے وزیراعظم اختیارات منتقل ہوئے ہیں مگر اس سے قبل صدر و وزیراعظم سے زبردستی یہ چیزیں چھین لی جاتی تھیں۔ سید خورشید شاہ نے کہاکہ پیپلزپارٹی نے ترجیحات میں ہمیشہ مسئلہ کشمیر کو صف اول میں رکھا گیاہے اور قائد عوام شہید ذوالفقار علی بھٹو اس کشمیرکے لیے روئے تھے اور جس رومال سے اپنے آنسو صاف کئے تھے اس رومال کی قیمت لگی تھی۔ آج بھی بلاول اس مشن کو جاری رکھے ہوئے ہیں اور انشا اللہ پیپلزپارٹی اس کاز کے لیے کاوشیں جاری رکھے گی۔ انھوں نے مزید کہاکہ اوورسیز پاکستانیوں کو ووٹ اور الیکشن لڑنے کا حق دلوانے کے لیے اسمبلی میں آواز اٹھاوں گا اور اووسیز کمیونٹی کے دیگر مسائل حل کرنے کے لیے بھی ذاتی طور پر کاوشٰیں کروں گا۔ صدر تقریب اور پیپلزپارٹی برطانیہ کےسربراہ سیدحسن بخاری نے کہاکہ اگر برطانیہ ہماری دوہری شہریت ہوتے ہوئے ہمیں یہاں لوکل کونسلز، ہاوس آف لارڈز اور پارلیمنٹ کا رکن بننے سے نہیں روک رہا تو پاکستان کیوں ہمارے ساتھ ناانصافی کررہاہے۔ اووسیز پاکستانیوں کو وہ تمام رائٹس ملنے چاہیں جو ایک پاکستانی شہری کو اس ملک میں حاصل ہیں۔ تقریب سے وزیرخوراک آزادکشمیر جاویداقبال بڈھانوی، سید حسین شہید سرور، سید اعجاز محی الدین، محمد اصغر قریشی، چوہدری محمد شریف، مسعود رانا، شبیرحسین ملک، راجہ اعظم خان ایڈوکیٹ، ڈاکٹر محمود شاہ، ڈاکٹریاسین رحمان، راجہ نثاراحمد، خادم ناصر، کونسلر محمد نسیم، پروفیسر امتیاز چوہدری، قیصر داود اور دیگر نے خطاب کیا۔ مقررین نے سید خورشید شاہ کی توجہ اووسیزکمیونٹی کے مسائل اور تنازعہ کشمیر کی طرف مبذول کروائی۔ تقریب سے ڈپٹی میئرلوٹن کونسلر طاہر ملک، مسلم کانفرنس برطانیہ کے جنرل سیکرٹری کونسلر ریاض بٹ، محمد حسیب بٹ، پروفیسر مسعود ہزاروی، چوہدری محمد ایوب، کونسلر نسیم ایوب اور دیگر اسٹیج پر براجماں تھے۔ تقریب میں مختلف مکاتب فکرکی شخصیات ، ڈاکٹرز، صحافی، انجینئرز، وکلاسمیت زندگی کے تمام شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے کل تقریباً تین سو افراد نے شرکت کی۔