مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
دنیا میں تعصبات کے خلاف یورپی پارلیمنٹ میں مسلمان اور یہودی لیڈروں کااجتماع
برسلز ... یہودیت مخالف سوچ، اسلامو فوبیا اور ہر قسم کے تعصب کی مذمت کے لئے مسلمان اور یہودی لیڈروں کا ایک اجتماع یورپی پارلیمنٹ میں منعقد ہوا۔ اس کا اہتمام افضل خان ایم ای پی نے فاؤنڈیشن فار ایتھنک انڈرسٹینڈنگ کے ساتھ مل کر کیا۔ اس اجتماع کا بنیادی پیغام تھا ’’We refuse to be enemies‘‘جو اس امید پر مبنی تھا کہ دونوں کمیونٹیز کے درمیان کشیدگی اور تقسیم کا تدارک کیا جائے۔ مسلم شرکاء نے یہودیوں کی عبادت گاہوں پر حملوں، کھلم کھلا یہودی مخالف اظہار، اور گزشتہ سال برسلز میں ایک مسلم انتہاپسند کی طرف سے جیوئش میوزیم پر حملے کی مذمت کی۔ انہوں نے اسلامی عسکریت پسند گروپ آئی ایس آئی ایس اور عراق میں عیسائی اور دیگر اقلیتی گروپوں کے خلاف ان کی جارحانہ کارروائیوں کی بھی مذمت کی جو بنیادی طور پر اسلامی تعلیمات سے ہرگز ہم آہنگ نہیں۔ یہودی شرکاء نے جیوئش ڈیفنس لیگ جیسے یہودی انتہاپسندوں کی طرف سے مظاہروں کا پرتشدد جواب دینے کی مذمت کی۔ دونوں فریقوں کا کہنا تھا کہ آگے بڑھنے کا واحد راستہ دونوں کمیونٹیز کے درمیان مفاہمت ہے۔ یورپی پارلیمنٹ کے وائس چیئر آف سکیورٹی اینڈ ڈیفنس افضل خان ایم ای پی نے کہا کہ مسلم اور یہودی لیڈروں کی طرف سے امن اور اتحاد کے اس پیغام کو دور دور تک اور تمام کمیونٹیز تک پھیلانا بہت ضروری ہے۔ آج کا یہ اجتماع تلخ جارحیت، نفرت اور تعصب کے جواب میں ہمت وحوصلے کا حقیقی مظاہرہ ہے۔ دیگر شرکاء میں برسلز اور بلجیم کے چیف رابی البرٹ گوئیگوئی، ممبر ڈی انسٹی ٹیوٹ دیس ہاٹیس ایٹیوڈز اسلامیکس امام عبدالودود گوراد، چیپلن آف یونیورسٹی آف سرے، کنسلٹنٹ اور پینل رکن بی بی سی الیگزینڈر گولڈبرگ، سیکرٹری جرمن مسلم اسلامک ایسوسی ایشن سارا جازی، فلسطینی و چیف امام فلورنس اٹلی ازڈین ایلزیر، یورپین نیٹ ورک آف انٹی ریزازم کے صدر اور سربراہ مائیکل پریواٹ، آرگنائزیشن آف جیوئش ویمن بلجیم کے صدر نادین لارچی، سٹریسبرگ اور برلن کے رابی ایری فولگر اور فاؤنڈیشن فار ایتھنک انڈرسٹینڈنگ کی یورپین ڈائریکٹر سامیا ہاتھروبی شامل تھیں۔