مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
جمہوریت میں حکمرانوں کو دل بڑا کرنے اور سب کو ساتھ ملا کر چلنے کی ضرورت ہے: بابر اعوان
مانچسٹر ... جمہوریت میں احتجاج کرنا عوام کا بنیادی حق ہے بشرطیکہ وہ پر امن ہو اور اس کے مقاصد خالصتاً عوام کے فلاح و بہبود اور بنیادی مسائل کے متعلقہ ہوں اور موجودہ حکومت کی اولین ذمہ داری ہے کہ وہ کشیدگی کو کم کرنے اور تمام جائز مطالبات کو ماننے کیلئے ممکن اقدام اٹھائیں حکمرانوں کا دل بڑ ا اور ذمہ داری بھی ہوتی ہے لہٰذا اسے جمہوری طریقے سے حل کیا جائے‘ ان خیالات کا اظہار سابق وزیر قانون بابر اعوان نے مانچسٹر میں اپنے اعزاز میں منعقدہ ایک تقریب میں کیا جس کا اہتمام لال قلعہ کے چوہدری مسرت نے کیا تھا۔ تقریب میں ممبران یورپی پارلیمنٹ سجاد کریم اور افضل خان کے علاوہ یاسمین قریشی ایم پی نے بھی خصوصی شرکت کی۔ بابر اعوان نے مزید کہا ،پاکستان کے مسائل ترقی کا واحد حل جمہوریت میں پنہاں ہے اور اس کیلئے ہمارے قائد جناب ذوالفقار علی بھٹو شہید اور محترمہ بے نظیر بھٹو شہید نے اپنی جانوں کا نذرانہ صرف جمہوریت اور مظلوم عوام کیلئے دیا ہے انکا خون رائیگاں نہیں جائے گا،پاکستان پیپلز پارٹی پوری دنیا میں جہاں جہاں بھی انسانیت ظلم کا شکار ہے انکے شانہ بشانہ کھڑی ہے چاہے وہ فلسطین ہو یا پھر کشمیر۔ بابر اعوان نے کہا کہ پاکستان ایک عظیم ملک اور پاکستانی قوم بڑی باصلاحیت باوقار ہے۔ پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جو عوام نے جمہوریت کے ذریعے حاصل کیااسی لئے اس مملکت خداد پر کوئی آنچ آسکتی اور نہ ہی اسے کوئی خطرہ ہے،ان کا کہنا تھا کہ حالات و حکومتیں بدلتی رہیں ہیں فکر کی وئی بات نہیں ۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ستارہ قائد اعظم کا اعزاز پانے والے ڈاکٹر سجاد حیدر کریم نے کہا کہ وہ مملکت پاکستان کو ترقی کی راہ پر گامزن دیکھنا چاہتے ہیں اورستارہ قائد اعظم کا نشان وہ ایک تارک وطن پاکستانی کیلئے بہت بڑااعزاز سمجھتے ہیں،انہوں نے فلسطین بارے کہا کہ چونکہ وہ برطانیہ کی حکمران جماعت سے تعلق رکھتے ہیں جوں ہی اس بارے حکومتی پالیسی واضع ہوئی تو وہ پھر بات کریں لیکن افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے عرب ممالک نے مقبوضہ کشمیر میں ہونے والے مظالم بارے کبھی بھی بھارت سے احتجاج نہیں کیا اور نہ ہی کبھی کشمیری قوم کے ساتھ اظہار یکجہتی کی جو ہم سب کیلئے لمحہ ء فکریہ ہے۔ یورپی ممبر پارلیمنٹ فضل خان نے کہا کہ غزہ پر اسرائیلی جارحیت فی الفور ختم اور پاکستان میں جمہوریت برقرار رہنی چاہئے۔ کوئی بھی غیر جمہوری طرز عمل قابل قبول نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ یورپی پارلیمنٹ میں بھی اب ہم تین پاکستانی نمایاں ہیں اور ہم 111کی قوت بن کر آپ کی نمائندگی کریں گے مسئلہ کشمیر و فلسطین پر موٴثر آواز بن کر کا کریں گے۔ یاسمین قریشی ایم پی نے کہا کہ وہ غزہ میں اسرائیلی مظالم و بربریت کے خلاف ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وہ ساتھی ممبران پارلیمنٹ کے ساتھ مل کر غزہ کے مظلوموں کے انسانی بنیادی حقوق کی حمایت اور انسانی ہمدردی کے طور پر انہیں فوری امداد کے لئے مہم چلارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت برطانیہ کا فرض بنتا ہے کہ وہ اسرائیل کے خلاف موثر قدم اٹھائے اور پارلیمنٹ کا اجلاس بلا کر اسرائیلی جارحیت اور غزہ کے مظلوم لوگوں کے لئے بات کرے۔ انہوں نے پاکستان کے بگڑتے حالات پر تشویش کا اظہار کیا۔ اوورسیز انوسٹمنٹ انٹرنیشنل فورم کے چئیرمین چوہدری مسرت علی نے کہا کہ وہ پاکستان اور اہل وطن کی خدمت ہر قسم کی سیاسی وابستگی سے بالاتر ہوکر محض محب وطن کے طور پر کرتے ہیں۔ سابق مئیر بلیک برن ثالث رضا کیانی نے پاکستان میں آئین اور جمہوریت کی بحالی پر زور دیا۔ چوہدری اکبر علی نے تمام مہمانوں کو خوش آمدید کہا۔ نظامت کے فرائض ڈاکٹر یونس پرواز نے ادا کئے جبکہ پیرمزمل حسین جماعتی نے دعا کرائی۔ تقریب میں میئر سٹوک آف ٹرنٹ ماجد خان،میئر آف اولڈہم کونسلر فدا حسین،واجد علی خان،سابق لارڈ میئر مانچسٹر کونسلر نعیم الحسن،سابق میئر آف برنلے چوہدری نجیب،ہارون کھٹانہ،راجہ وحید مجید لہری،کونسلر رب نواز،چوہدری ظہیر احمد کائرہ،افتخار احمد گوگا اور لوگوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی۔(بیورو رپورٹ:فیاض بشیر)