مقبول خبریں
راچڈیل کیسلمئیرسنٹر میں کمیونٹی کو صحت مند رہنے،حفاظتی تدابیر بارے آگاہی ورکشاپ کا انعقاد
یورپی پارلیمنٹ میں قائم ’’فرینڈز آف کشمیر گروپ‘‘ کی تنظیم سازی کردی گئی
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
ہم نے سچ کو دیکھا ہے جھوٹ کے جھروکوں سے!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
انڈین کشمیر،پیپلز لیگ کے چیئرمین مختار احمد گرفتار،شبیر شاہ گھر میں نظر بند
سرینگر :مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی پولیس نے کل جماعتی حریت کانفرنس کے رہنما اور جموںوکشمیر پیپلز لیگ کے چیئرمین مختار احمد وازہ کو جمعرات کو ضلع پلوامہ کے علاقے اونتی پورہ میں اس وقت گرفتار کر لیاگیا جب وہ دیگر پارٹی رہنمائوں اور کارکنوں کے ہمراہ ایک اجلاس میں شرکت کیلئے جارہے تھے ۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق پیپلز لیگ کے ترجمان امتیاز احمد ریشی نے پولیس کارروائی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ اجلاس عوامی ایکشن کمیٹی کی گولڈن جوبلی کے سلسلے میں ہونے والی تقریبات کا جائزہ لینے کے لئے بلایا گیا تھا ۔ انہوں نے مختار احمد وازہ کی گرفتاری کوسراسر قابض انتظامیہ کی بوکھلاہٹ قرار دیا۔ ادھر ممتاز سکالر قاضی نثار احمد کی 20ویں برسی کے موقع پر اسلام آباد قصبے میں مکمل ہڑتال کی گئی۔ رپورٹ کے مطابق قصبے میں تمام دکانیں اور کاروباری مراکز بند رہے ۔ جلو س بھی نکالا گیا اورشہید کے لیے فاتحہ خوانی کی گئی۔ ادھر امت اسلامی کے چیئرمین اور قاضی نثار کے بیٹے قاضی یاسر احمدنے پرامن تحریک آزادی کو منطقی انجام تک جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کیا۔ قاضی نثار احمد کو 19جون1994کونامعلوم مسلح افراد نے اسلام آباد کے علاقے Dialgamمیں شہید کر دیاتھا۔ امت اسلامی کے ترجمان نے ایک بیان میں کہاہے کہ قاضی نثار احمد کے قتل میں بھارتی ایجنسیاں ملوث ہیں۔ قاضی نثار احمدمقبوضہ وادی میں 1987میں بننے والے سیاسی و سماجی تنظیموں کے اتحاد مسلم متحدہ محاذ کے رکن بھی رہے ۔ شہید اپنے جوش خطاب کی وجہ سے بھی معروف تھے ۔ دریں اثناء قابض انتظامیہ نے حریت رہنمائوں شبیر احمد شاہ اور نعیم احمد خان کو شہید کی برسی میں شرکت کے لیے اسلام آباد جانے سے روکنے کے لیے انہیں گھر وں میں نظربند کر دیا۔