مقبول خبریں
مکس مارشل آرٹ کونسل اور چیریٹی آرگنائزیشن کے زیر اہتمام تقریب کا انعقاد
بریگزیٹ بحران :کنزرویٹو پارٹی کی تین خواتین ممبر کی آزاد گروپ میں شمولیت
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
میئرآف لوٹن (برطانیہ) نے شاہد حسین سید کو کمیونٹی سروسز پر شیلڈ پیش کی
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
راجہ نجا بت حسین کی صدر آزاد کشمیر سردار مسعود اور وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر سے ملاقات
میں روشنی سے اندھیرے میں بات کرتا ہوں!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں کے بہیمانہ قتل پر مانچسٹر میں پاکستانی قونصلیٹ کے سامنے مظاہرہ
مانچسٹر ... تحریک منہاج القرآن برطانیہ کے زیر انتظام لاہور میں علامہ ڈاکٹر طاہر القادری کی رہائشگاہ اور ادارہ منہاج القرآن سے رکاوٹوں کو ہٹانے کے موقع پر پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں کے بہیمانہ قتل پر مانچسٹر میں پاکستانی قونصلیٹ کے سامنے زبردست مظاہرہ کیا گیا ۔ جس میں پاکستان عوامی تحریک منہاج القرآن سمیت دیگر سیاسی جماعتوں کے رہنمائوں ، علماء اکرام اور سول سوسائٹی کے اراکین نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔ اس موقع پر زبردست نعرہ بازی کی گئی اور ماڈل ٹائوں کے شہداء کو زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کیا گیا ۔ مظاہرین نے پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جس پر پنجاب حکومت اور پولیس کے خلاف نعرے درج تھے ۔ مظاہرین دو گھنٹے تک مظاہرہ کرتے رہے خواتین کی بہت بڑی تعداد بھی مظاہرے میں موجود تھی جو جذباتی انداز میں علامہ طاہر القادری سے اظہار یکجہتی اور واقعہ میں پولیس کے ہاتھوں ہلاک ہونے والوں اور لواحقین سے بھی اظہار ہمدردی کرتی رہیں ۔ مانچسٹر قونصلیٹ آفس کے باہر ہونیوالے مظاہروں میں اپنی نوعیت کا ایک بڑا مظاہرہ تھا ۔ اس موقع پر علماء کرام و دیگر نے اپنے خطابات میں کہا کہ پرامن احتجاج کر رہے ہیں ہمارا مطالبہ ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب فوری مستعفی ہو جائیں ، اور اس واقعہ کی شفاف انکوائری کرائی جائے اور قتل میں ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف قتل کے مقدمات درج کئے جائیں ۔ انہوں نے کہا کہ 8 افراد کے قتل کو کبھی معاف نہیں کیا جائیگا ، پولیس نے جس بے دردی سے منہاج القرآن سے وابسطہ خواتین اور بزرگوں پر وحشیانہ تشدد کیا اور نوجوان کے سینوں پر گولیاں برسائیں اسکی تاریخ میں مثال نہیں ملتی ۔ انہوں نے کہا کہ ہم ایسی جمہوریت کو نہیں مانتے اب انقلاب آکر رہیگا اور شہداء کا خون رائیگاں نہیں جائیگا ۔ برطانیہ کے ہر شہر میں احتجاج کا سلسلہ شروع ہو گا ۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں اور لاہور میں دہشتگردوں نے جو تباہی پھیلائی اسکا حساب انہیں دنیا اور آخرت دونوں جگہوں پر دینا ہو گا ۔ اس موقع پر ڈاکٹر محمد یونس پرواز ، مولانا محمد دین سیالوی ، مولانا احمد نثار بیگ ، مولانا غلام مصطفی ، کونسلر شوکت علی ، آل پاکستان مسلم لیگ برطانیہ کے صدر الطاف شاہد سدھو ، پیپلز پارٹی برطانیہ کے ایڈیشنل سیکرٹری جنرل چوہدری جاوید اقبال ، ممتاز قانون دان طاہر رفیق سولیسٹر ، حاجی منور حسین کے علاوہ بڑی تعداد میں مقررین نے خطاب کیا اور ریاستی دہشتگردی کی مذمت کی اور مطالبہ کیا کہ نواز شریف ، میاں شہباز شریف سمیت وزیر قانون رانا ثناء اللہ فوری طور پر اپنے عہدوں سے مستعفی ہو جائیں ۔ علماء کرام نے کہا کہ اب سبز انقلاب کو کوئی نہیں ٹال سکتا ، 23جون کو جب داعی انقلاب پاکستان پہنچیں گے تو ملکی سیاست کا رخ تبدیل ہو جائیگا اور سب قاتل جیل کی سلاخوں کے پیچھے ہونگے ۔ اس موقع پر پاکستانی کونصلیٹ جنرل کو یادداشت پیش کی گئی جس میں مطالبہ کیا گیا کہ سانحہ لاہور کے ذمہ داروں کو فوری انصاف کے کٹہرے میں لایا جائے اور انہیں قرار واقعی سزا دی جائے ۔( بیورو رپورٹ:فیاض بشیر)