مقبول خبریں
دی سنٹر آف ویلبینگ ، ٹریننگ اینڈ کلچر کے زیر اہتمام دماغی امراض سے آگاہی بارے ورکشاپ
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
جس لڑکی نے خواب دکھائے وہ لڑکی نابینا تھی!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
سرینگر،حریت رہنمائوں کا دھرنا،لاٹھی چارج،متعدد زخمی،12گرفتار
سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں بھارتی پولیس نے انسانی حقوق کی خلاف ورزیو ں کے خلاف اور 2010ء کے شہداء کی یاد میں پریس انکلیو سرینگر میں ایک خاموش احتجاجی دھرنے پر طاقت کا وحشیانہ استعمال کرتے ہوئے حریت رہنمائوں یاسمین راجہ اور سید بشیر اندرابی سمیت ایک درجن کارکنوں کو گرفتارکر لیا ہے ۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق گرفتار افراد کو کوٹھی باغ تھانے میں نظربند کردیا گیاہے ۔ لاٹھی چارج سے حریت رہنما ظفر اکبر بٹ ، جاوید احمد میر سمیت متعد افراد زخمی بھی ہوگئے ۔دریں اثناء سرینگر میں بزرگ حریت رہنما سید علی گیلانی ، شبیر احمد شاہ اورنعیم احمد خان سمیت دیگر حریت رہنمائوں کی قیادت میں ایک جلوس نکالا گیا اور حیدر پورہ چوک میں دھرنا دیا گیا۔ جلوس سے خطاب کرتے ہوئے سیدعلی گیلانی ، شبیر احمد شاہ اورنعیم احمد خان نے کہا کہ وہ جدو جہد آزادی کے حوالے سے آئندہ کے لئے مشترکہ پروگرام کا اعلان کریں گے ۔ حریت رہنمائوں نے 2010ء کے تمام شہداء کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ انکے ادھورے مشن کو پایہ تکمیل تک پہنچایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کشمیری عوام بھارتی غلامی سے مکمل آ زادہو کر آزاد ماحول میں رہنا چاہتے ہیں۔ دھرنے میں محمد اشرف صحرائی ،شبیر احمد ڈار، محمد یوسف نقاش، اعجاز احمد میر ، مشتاق الاسلام کے نمائندے بلا احمد شاہ، محمد ایاز اکبر سمیت بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی ۔ لوگ آزادی کے حق میں اور ‘‘ گو انڈیا گو ’’ کے نعرے لگارہے تھے ۔