مقبول خبریں
دار المنور گمگول شریف سنٹر راچڈیل میں جشن عید میلاد النبیؐ کے حوالہ سےمحفل کا انعقاد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج انسانی حقوق کی تنظیموں کو کام نہیں کرنے دیتی ، امریکی محکمہ خارجہ
سرینگر: امریکی محکمہ خارجہ نے کہا ہے کہ انسانی حقوق کے علمبرداروں کو مقبوضہ کشمیرمیں اپنے فرائض کی ادائیگی سے روکا جارہا ہے اور انہیں مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوجی ہراساں کرر ہے ہیں۔کشمیر میڈیاسروس کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ نے بھارت کے بارے میں اپنی انسانی حقوق کی رپورٹ میں کہا ہے کہ انسانی حقوق کے ادارے کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیوں کو دستاویزی شکل دے چکے ہوتے اگر بھارتی فوجی اور پولیس اہلکار انہیں ہراساں اورکام کرنے سے نہ روکتے ۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ انسانی حقوق کے بارے میں بعض بین الاقوامی این جی اوز کو اپنے نمائندوں کیلئے ویزوں کے حصول میں مشکلا ت کاسامنا کرنا پڑ ا۔رپورٹ میں واضح کیا گیا ہے کہ مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوجی کشمیریوں کو دوران حراست گمشدگی ، قتل عام ، عصمت دری ، جنسی تشدد، اجتماعی گمنام قبروں اور اظہار رائے کی آزادی سلب کرنے جیسے مظالم کا نشانہ بنا رہے ہیں۔امریکی محکمہ خارجہ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ بہت سے مقامی اور بین الاقوامی انسانی حقوق کے گروپوں کو مقبوضہ علاقے میں بھارتی فوجیوں کی طرف سے بڑے پیمانے پر جاری پامالیوں کی رپورٹیں تیار کرتے وقت شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔انسانی حقوق کے مقامی کمیشن کے پاس بھارتی فوجیوں کی طرف سے کی گئی انسانی حقوق کی پامالیوں کی تحقیقات کا کوئی اختیار نہیں ۔جموں وکشمیر کولیشن آف سول سوسائٹی کے کنو ینئر خرم پرویز نے صحافیوں کو بتایا کہ کشمیر میں مختلف بھارتی ایجنسیاں انسانی حقوق کے کارکنوں اور تنظیموں کو ہراساں ،ان پر حملوں اورنمائندوں کے قتل میں ملوث ہیں۔مقبوضہ علاقے میں مقامی تنظیموں کے ساتھ کام کرنے کی خواہشمند انسانی حقوق کی تنظیموں کو ویزے بھی نہیں دیئے جاتے ۔