مقبول خبریں
یوم عاشور کے حوالہ سے نگینہ جامع مسجد اولڈہم میں روح پرور،ایمان افروز محفل کا اہتمام
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
سانحہ ٹوپیاں کے 5سال مکمل،جنوبی کشمیر میں ہڑتال،مظاہرے
سرینگر : سانحہ شوپیا ں کے 5سال مکمل ہونے پر جمعہ کو جنوبی کشمیر میں عام ہڑتال سے کاروبار زندگی معطل ہو کر رہ گیا ۔ کئی مقامات پر جلسے جلوس اور مظاہرے کئے گئے ۔ علی گیلانی نے ہڑتال کی کال دی تھی شوپیا ں میں نیلوفر اور آسیہ کے رشتہ داروں نے نالہ رمبی آراکے نزدیک خاموش احتجاجی دھرنا دیا جبکہ طلباء و طالبات نے احتجاجی مظاہرے کئے ، بھارتی فوجیوں کی بربریت کا نشانہ بننے والی لڑکیوں کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریبات بھی منعقد کی گئیں ، عوام نے مطالبہ کیا کہ بے گناہ لڑکیوں کو شہید کرنے والے ملزمان کو سخت سزادی جائے ، ادھر ایک عرب ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے میر واعظ عمر فاروق نے کہا کہ آرٹیکل370 نان ایشو ہے ، کشمیر کامسئلہ اس قسم کے قانون سے نہیں صرف اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد سے حل ہو سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ370 صرف کاغذی قانون ہے ، عملی طور پر کشمیر ایک فوجی اور پولیس سٹیٹ ہے ۔ جسے فوجی وردی میں ملبوس لوگ چلاتے ہیں۔ کشمیرعوام کے مستقبل کا مسئلہ ہے ۔ پاک بھارت وزرائے اعظم کی ملاقات کا خیر مقدم کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ کشمیری عوام کے مفاد میں ہے ۔ جب تک دونوں ملک قریب نہیں آئیں گے ، کشمیر کا مسئلہ حل نہیں ہوسکتا۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس نے اس معاملے پر ہمیشہ روایتی سوچ کا مظاہرہ کیا۔ تاریخ نے بھارتی حکومت کو ہمیشہ کے لئے کشمیر کا مسئلہ حل کرنے کا موقع فراہم کیا ہے ۔ سیدعلی گیلانی نے کہاہے کہ بھارت کی سازشوں کا ڈٹ کر مقابلہ کیا جائیگا، اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ کشمیر باقاعدہ طور پر بھارت کی ر یاست نہیں بلکہ ایک متنازعہ علاقہ ہے جس کے مستقبل کا فیصلہ ہونا ابھی باقی ہے ۔بھارت نے کشمیر یوں کو حق خود ارادیت دینے کا وعدہ کیا تھا لیکن اپنے اس دعدے کو پورا کرنے کے بجائے اس نے کشمیریوں کی تحریک آزادی کو دبانے کیلئے فوجی طاقت کا سہارا لیا۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ علاقے کی بھارت نواز جماعتوں کو محض اپنے اقتدار سے غرض ہے دفعہ 370 کے معاملے پر انکا واویلا محض ایک دکھاوا ہے ۔