مقبول خبریں
جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی برطانیہ برانچ کے زیرِ اہتمام فکر مقبول بٹ شہید ورکز یونیٹی کنونشن کا انعقاد
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیریوں نے بھارت کو بتا دیا وہ جدو جہد آزادی سے پیچھے نہیں ہٹیں گے،علی گیلانی
سری نگر...مقبوضہ کشمیر میں آزادی پسند رہنمائوں اور جماعتوں نے نام نہاد انتخابات کو مسترد کرنے اورتحریک آزادی کے ساتھ اپنی گہری وابستگی ظاہر کرنے پر بارہمولہ ، بانڈی پورہ اور کپواڑہ اضلاع کے لوگوں کو مبارک باد دی ہے ۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق بزرگ حریت رہنما سید علی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ شمالی اضلاع کے لوگوں نے بھی وسطی اور جنوبی اضلاع کے لوگوں کی طرح نام نہاد انتخابات سے لاتعلق رہ کر بھارت کو پیغام دیا ہے کہ آزادی کے حصول تک وہ اپنی جد وجہد ہر قیمت پر جاری رکھیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے لوگوںکو انتخابات میں شریک کرنے کے لئے ہر ہتھکنڈا آزمایا لیکن ناکام رہے ۔ کل جماعتی حریت کانفرنس کے ترجمان نے کہا کہ بڑی تعداد میں تعینات بھارتی فوجیوں اور قابض انتظامیہ کے دبائو کے باوجود شمالی اضلاع کے لوگوں نے فراڈ انتخابات کو مسترد کیا جو لائق تحسین ہے ۔حریت کانفرنس کے سینئر رہنما شبیر احمد شاہ نے نام نہاد انتخابات کے بائیکاٹ کو سراہتے ہوئے کہا کہ وہ دن دور نہیں جب مقبوضہ علاقے پر بھارت کا غیر قانونی قبضہ ختم ہو گا۔ جموںو کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین یاسین ملک نے ایک بیان میں کہا کہ شمالی اضلاع کے لوگوں نے بھی فراڈ انتخابات سے دور رہ کر تحریک آزادی اور شہداء کے ساتھ اپنی وفا داری کا ثبوت دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قابض انتظامیہ نے آزادی پسند رہنمائوں اور کارکنوں کو تھانوں اور جیلوںمیں ڈال کر انہیں فراڈ انتخابات کے بائیکاٹ کی مہم سے دور رکھنے کی کوشش کی لیکن اس کے باوجود وہ اپنے مذموم مقصد میں ناکام رہی۔