مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
زائرین حج و عمرہ کو تیزی سے پھیلنے والے مہلک کرونا وائرس سے بچائو کی اشد ضرورت ہے
برمنگھم ... برطانیہ میں حجاج کرام کی رہنمائی کرنے اور انہیں تمام معاملات و حالات سے با خبر رکھنے کیلئے قائم ایسوسی ایشن آف بڑش حجاج کے جنرل سیکریٹری خالد پرویز نے حج و عمرہ زائرین کو خبر دار کیا ہے کہ کونا وائرس جیسا مہلک مرض دنیا میں تیزی سے پھیل رہا ہے۔ سعودی عرب سے پھیلنے والی کرونا وائرس کے نتیجے میں اب تک102افراد ہلاک ہوگئے ہیں انکا کہنا ہے کہ یہ وائرس سعودی عرب سے نکل کر متحدہ عرب امارات ، قطر، کویت، بحرین، عمان ، اردن، مصر، برطانیہ ، فرانس، مصر، جرمن، اٹلی، تیونس، فلپائن اور دیگر ممالک تک پھیل گیا ہے جبکہ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے کرونا وائرس پر اپنی سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے سعودی عرب کو اس سلسلے میں مدد کی پیش کش کی ہے۔ علاوہ ازیں سعودی حکومت نے اس تشویشناک صورتحال کی وجہ سے وزیر صحت کو برطرف کردیا ہے۔ سانس کے ذریعے دوسرے لوگوں میں پھیلنے والے اس وائرس کے نتیجے میں متاثرہ افراد کو نمونیہ ہوجاتا ہے اور ان کے گردے فیل ہو جاتے ہیں جس کے بعد ان کی موت واقع ہوجاتی ہے۔ یہ وائرس سعودی عرب میں عمرہ اور حج کرنے کیلئے جانے والے بعض افراد کے ذریعے دنیا کے 16ممالک میں پھیل چکا ہے، سعودی عرب کی حکومت نے لوگوں کو خبردار کیا ہے کہ وہ عمرہ اور حج کی ادائیگی کے دوران چہرے پر ماسک لگا کر رکھیں اور دوسرے لوگوں کی سانس سے خود کو محفوظ رکھیں۔ ایسوسی ایشن آف برٹش حجاج کے جنرل سیکرٹری خالد پرویز نے بڑی عمر کے افراد اور طویل مدت کی بیماریوں میں مبتلا مریضوں کو مشورہ دیاہے کہ اگر انہوں نے اس سال حج کرنے کا پروگرام بنایا ہے تو اسے ملتوی کردیں، کیونکہ حج پر دنیا بھر سے لاکھوں لوگ شریک ہوتے ہیں اس لئے خاص طورپر معمر افراد اور بیماروں کو کرونا وائرس لگنے کا خطرہ ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ رسک کیٹگری کے افراد کو اس سال عمرے کا ارادہ بھی ترک کردینا چاہیے۔ خالد پروریز نے کہا کہ چونکہ ابھی تک اس بیماری سے بچنے کے انجیکشن یا ویکسین تیار نہیں ہوئی، اس لئے حج اور عمرہ کے لئے جانے والوں کو بہت زیادہ احتیاط کی ضرورت ہے۔ انہوں نے حج وعمرہ کا سفر کرنے والوں سے کہا کہ وہ سعودی عرب میں حفظان صحت کے اصولوں پر عمل کریں اور ایک دوسرے کا تولیہ اور دیگر اشیاء استعمال نہ کریں۔ اپنے منہ کو ماسک سے ڈھانپ کر رکھیں اور چھینکتے وقت اپنی ناک پر ٹشو رکھیں تاکہ ان کے جراثیم دوسروں کو نہ لگیں اسی طرح وہ دوسروں کی چھینکوں سے بھی بچیں اس کے علاوہ اگر انہیں کھانسی ، بخار، ڈائریا وغیرہ ہو تو فوری طور پر ڈاکٹر سے رجوع کریں، عازمین کو یہ مشورہ بھی دیا گیا ہے کہ وہ سعودی عرب کے سفر سے قبل ضروری انجکشن بھی لگوائیں۔