مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
ایک ہی پاکستانی گھرانے کے پانچ افراد کی ہلاکت پر پوری کمیونٹی سوگوار ہے: لارڈنذیر احمد
شفیلڈ... ایک ہی گھر میں تین نسلوں سے تعلق رکھنے والے پانچ زندہ انسانوں کی آگ میں زندہ جل کر ہلاکت پر ناصرف خاندان کے افراد اور پاکستانی کمیونٹی بلکہ پورا برطانیہ اور خاص طور پر یارکشائر دکھ اور غم کی تصویر بنا ہوا ہے۔ اسی علاقے سے تعلق رکھنے والی کمیونٹی کی سرکردہ شخصیت لارڈ نذیر احمد نے کشمیر لنک لندن سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ یہ یارکشائر کی تاریخ کا اندوہناک واقعہ ہے جس پر ہر آنکھ اشکبار ہے۔ انہوں نے بتایا کہ متاثرہ خاندان کے رکن اشفاق کیانی شفیلڈ میں مسلم لیگ ن کے صدر ہیں اور خاندان کے سب لوک اپنے حسن سلوک کی وجہ سے جانے جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بچوں کی والدہ سکتے کی حالت میں ہے۔ اس حادثے میں جل کر ہلاک ہونے والی دادی آگ لگنے پر پہلے باہر بھاگی تھی اس نے چیخ چیخ کر لوگوں کو آگ کیطرف متوجہ بھی کیا اور اسکے بعد دوبارہ جلتے ہوئے گھر میں بچوں کو بچانے کیلئے دوڑی اور آک کے تیز شعلوں کی نذر ہو گئی۔ اس حادثے کا شکار ہونے والے پانچ افراد میں ٥٤ سالہ دادی کے علاوہ ٢٠ سالی پھوپھو، سات اور نو سال کے دو لڑکے اور اور نو ماہ کی شیر خوار بچی شامل ہیں۔ تین منزلہ متاثرہ گھر میں آگ بجھانے کیلئے خاصی مشکلات بھی پیش آیئں۔ پولیس نے علاقے کو سیل کر دیا ہے اور لاشیں پوسٹ مارٹم کیلئے ہسپتال بھیج دی گئی ہیں۔ بد نصیب خاندان کا تعلق راولپنڈی کی تحصیل گجر خان کے علاقے کلر سیداں سے ہے۔ خاندان کے ترجمان اشفاق کیانی نے سکائی نیوز کے رپورٹر سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس وقت متاثرہ خاندان کی بچ جانے والی بچوں کی ماں سکتے میں ہے، گھر کا سربراہ اس وقت کام پر تھا۔