مقبول خبریں
جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی برطانیہ برانچ کے زیرِ اہتمام فکر مقبول بٹ شہید ورکز یونیٹی کنونشن کا انعقاد
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
تمام پولنگ سٹیشنزانتہائی حساس قرار،حریت رہنماؤںکی گرفتاری کیخلاف بانڈی پورہ ودیگرعلاقوں میں ہڑتال
سرینگر...مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد انتخابات کے پہلے مرحلے میں گزشتہ روز حلقہ اننت ناگ میں حریت کانفرنس گیلانی گروپ کی اپیل پر مکمل ہڑتال کی گئی ہے اور لوگوں نے انتخابات کا بائیکاٹ کیا۔ اس موقع پر انتخابی حلقے میں قائم کئے گئے تمام پولنگ سٹیشن کو انتہائی حساس قرار دیتے ہوئے فوج اور پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی تھی جبکہ انتخابی عمل کے دوران احتجاجی مظاہروں کا خدشہ لاحق ہونے کے پیش نظر جنوبی کشمیر میں دوسو سے زائد نوجوانوں اور حریت کارکنوں کو گرفتاری عمل میں لائی گئی ۔حریت رہنمائوں سید علی گیلانی ،میر واعظ عمر فاروق نے انتخابات کو محض ڈھونگ اور لاحاصل مشق قرار دیا ۔تفصیل کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد انتخابات کے پہلے مرحلے میں پارلیمانی حلقہ انتخاب اسلام آباد میں منعقد ہوا تاہم اس موقع پر حریت کانفرنس کی کال پر اننت ناگ میں مکمل ہڑتال رہی اور لوگ ووٹ ڈالنے کے بجائے اپنے گھروں میں محصور رہے۔ہڑتال کے باعث حلقے میں انتخابی ٹرن آؤٹ انتہائی کم رہا ۔حلقہ اننت ناگ میں اس موقع پر سکیورٹی کے غیرمعمولی انتظامات کرتے ہوئے وادی بھر میں خصوصا اننت ناگ میں فوج اور پولیس کی بھاری نفری کو تعینات کیا گیا تھا جبکہ جگہ جگہ فوج اور پولیس دکھائی دے رہی تھی ۔احتجاجی مظاہروں کا خدشہ لاحق ہونے کے پیش نظر جنوبی کشمیر میں دوسوسے زائد جوانوں اور حریت رہنمائوں کی گرفتاریاں عمل میں لائی گئیں۔انتخابی حلقے میں قائم تمام پولنگ سٹیشن کو انتہائی حساس قرار دیاگیا تھا ۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کے ہاتھوں حریت رہنمائوں اور کارکنوں کی گرفتاری کے خلاف بانڈی پورہ، حاجن اورسوپورمیںجمعرات کو مکمل ہڑتال کی گئی۔ لوگوں نے سڑکوں پر نکل کر بھارتی فوج اور پولیس کی چیرہ دستوں کے خلاف زبردست مظاہرے کیے۔کشمیر میڈیا سروس کے مطابق بانڈی پورہ ، حاجن اور سوپور قصبوں میں د کانیں، کاروباری مراکز بند جبکہ سڑکوںپر ٹریفک معطل رہی۔ بھارتی فوج اور پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا۔ پولیس اہلکاروں اور مظاہرین میں تصادم کی بھی اطلاعات ملی ہیں۔ مشتعل مظاہرین نے بھارت کے خلاف اور ازادی کے حق میں زبردست نعرے بازی کی۔ قبل ازیںبھارتی پولیس نے تحریک حریت کے کارکن عبدالحمید پرے کوحاجن سے گرفتار کر لیاتھا۔ دریں اثناء حریت رہنمائوں سید علی گیلانی ،میر واعظ عمر فاروق ،فریدہ بہن جی نے نام نہاد انتخابات کو محض ڈھونک اور ایک لاحاصل مشق قرار دیا ہے۔ حریت رہنما سید علی گیلانی نے کہا کہ انتخابات کبھ بھی حق خود ارادیت کا نعم البدل نہیں ہو سکتے۔انہوں نے کہا کہ بھارت خواہ کتنے ہی ہتھکنڈے استعمال کرلے وہ بھی بھی کشمیریوں کے جذبہ ازادی کا رخ موڑ نہیں سکتا۔متحدہ قومی موومنٹ کی چیئرپرسن فریدہ بہن جی نے کہا کہ نام نہاد انتخابات کی اڑ میں ڈرامہ رچایا جارہا ہے ۔لاکھوں افواج کی موجودگی میں کشمیر میں رچائے جارہے اس ڈرامے سے نہ تو اج مسئلہ کشمیر کی متنازعہ حیثیت کے حوالے سے عالمی برادری کو گمراہ کیا جا سکا ہے اور نہ ہی ائندہ ایسا ہوگا۔یاسین ملک نے انتخابی ڈرامے کو مسترد کرتے ہوئے اس عزم کی تجدید کی ہے کہ مسئلہ کشمیرکو کشمیری عوام کی امنگوں کے مطابق حل تک کشمیری قوم اپنی جدوجہد جاری رکھے گی۔