مقبول خبریں
راچڈیل، ساہیوال جیسے شہروں کے رشتے کو مثالی بنایا جائیگا: ممبر پنجاب اسمبلی ندیم کامران
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
ہم نے سچ کو دیکھا ہے جھوٹ کے جھروکوں سے!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
حساس قومی ادارے پر الزامات سے ملک کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازش نظر آتی ہے: فدا حسین کیانی
پنجیڑی ... مسلم کانفرنس کے سابق چیف آرگنائزر اور سابق پولیٹیکل ایڈوائزرفدا حسین کیانی نے کہا ہے کہ معروف صحافی اور اینکر پرسن حامد میر پر قاتلانہ حملہ انتہائی افسوسناک اور آزادی صحافت پر حملہ ہے ۔ لیکن اس حملے کی آڑ میں پاکستان کی دفاعی ایجنسی آئی ایس آئی کے خلاف گھناؤنے الزامات ملکی سلامتی کے اداروں کو کمزور کرنے کی ایک سازش نظر آتی ہے۔ حامد میر ملک کے معروف صحافی ہیں اُن پر قاتلانہ حملے کی تحقیقات کر ملزموں کو بے نقاب کر کے سز ا دینی چاہے لیکن اس حملے کو پاکستان کی سب سے بڑی دفاعی ایجنسی آئی ایس آئی اور اُس کے سربراہ کے ساتھ منسلک کر کے جو زہریلا پروپیگنڈہ کیا جا رہا ہے وہ قابل مذمت ہے ۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ دو روز سے تسلسل کے ساتھ مسلح افواج پاکستان اور آئی ایس آئی کے خلاف جو مہم ایک چینل پر جاری ہے وہ پاکستان کے عوام کے جذبات سے کھیلنے کے مترادف ہے ۔ ہندوستان جو کام نہیں کر سکا آج وہ ہمارے ملک کا ایک چینل کر رہا ہے اور یوں محسوس ہو رہا ہے کہ ہم اپنے ملک کا نہیں بلکہ پڑوسی ملک کا کوئی چینل دیکھ رہے ہیں۔ فدا کیانی نے کہا کہ قومی سلامتی کے ادارے پاکستان کی سرحدوں کے محافظ ہیں وہ نہ صرف جنگ کی صورت میں جانوں کی قربانیاں دیکر ملک کا دفاع کرتے ہیں بلکہ ہر مشکل اور آفت چاہے وہ زلزلہ ہو یا سیلاب میں مسلح افواج پاکستان ہی آگے بڑھ کر اپنا کردار ادا کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس حملے کی آڑ میں ہندوستانی خواہشات کو پورا کرتے ہوئے مسلح افواج پاکستان اور آئی ایس آئی کو بدنا م کیا جا رہا ہے جو قومی سلامتی کے اداروں پر ایک بہت بڑا حملہ ہے جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے ۔ان خیالات کا اظہار وہ سیاسی و سماجی رہنما راجہ فیاض احمد خان کے صاحبزادے راجہ عدنان فیاض کی دعوت ولیمہ اور ۔اُنکی بیٹی کی تقریب رخصتی میں سابق صدر آزاد کشمیر راجہ ذوالقرنین خان سے ملاقات میں کررہے تھے۔تقریب میں سابق چئیرمین پبلک سروس کمیشن آزاد کشمیربرگیڈئرریٹائرڈ راجہ سعید اختر خان ، سابق چیف کنزرویٹیو جنگلات راجہ خضر حیات خان،ایس ایس پی میرپور راجہ عرفان سلیم، سابق ممبر ضلع کونسل راجہ محمد اسحاق، صفا پارک جبی کےچئیرمین راجہ افتخار احمد ، راجہ نسیم اختر خان ،راجہ ابرار حسین خان راجہ رضی الرحمان ، راجہ قیصر اقبال ، مرزا راشد بیگ ، راجہ فضل الرحمان اور دیگر شریک تھے۔ اس موقع پر بھی موضوع حامد میر پر حملہ اور اس ایشو کے بگاڑ میں میڈیا کا کردار رہا۔ شرکا گفتگو کی اکثریت کا خیال تھا کہ کسی ایک فرد کی جان ملک کے اہم ترین ادارے کی حرمت سے بڑھ کر نہیں میڈیا کو ایسے بیانات سوچ سمجھ کر دینے چاہیئں۔