مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
حکمران گھرانے کے 20افراد اس حکومت کو چلا رہے ہیں پاکستان میں خاندانی بادشاہت قائم کرنا چاہتے ہیں
سلائو ... پاکستان عوامی تحریک کے قائد ڈاکٹر محمد طاہر القادری نے کہا ہے کہ 11 مئی کو پاکستان بھر میں احتجاجی مظاہرے ہوں گے اس دن انقلاب کا لائحہ عمل دوں گا۔ حکمران ریاست کے نہیں، دہشت گردوں کا سیاسی چہرہ ہیں اور یہ سیاسی اقتدار کے دائمی خاتمے کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ اگر حکمرانوں کو مزید 6 ماہ مل گئے تو ملک برباد ہو جائے گا اور سنوارے جانے کے قابل نہیں رہے گا۔ وہ گذشتہ روز ویڈیو لنک کے ذریعے کینیڈا سے پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ طالبان مذاکرات اور پرویز مشرف کے ٹرائل کی آڑ میں حکمران قومی اداروں کی نج کاری کے ذریعے اربوں کما رہے ہیں، آئین کی معطلی کا مقدمہ 12 اکتوبر 1999 سے ہونا چاہئے، ممبران کی تنخواہیں بے پناہ جبکہ غریب عوام مہنگائی، بے روزگاری، کرپشن، بد امنی اور دہشت گردی کی چکی میں پس رہی ہے۔ سوائے انقلاب کے کوئی راستہ نہیں، اب حکمرانوں سے بات نہیں عوامی ٹیک اوور ہوگا۔ دہشت گردوں نے الیکشن میں موجودہ حکمرانوں کو تحفظ دیا، اب حکمران ان کو محفوظ علاقہ دینا چاہتے ہیں۔ تھر میں موت کا راج ہے اور ملک کے کروڑوں گھرانے تھر بن چکے ہیں اورسندھ میں ثقافت اور پنجاب میں یوتھ فیسٹول کے نام پر کرپشن اور دھوکہ دہی ہو رہی ہے۔ عوام بھوک سے مر رہے ہیں اور حکمران جہنم کی آگ سے اپنی بھوک مٹا رہے ہیں۔ پرویز مشرف کامقدمہ ذاتی عناد پر بنایا جا رہا ہے۔ فوج کا مورال کم کیا جا رہا ہے جو ایک بہت بڑی سازش ہے جس کا سکرپٹ باہر لکھا گیا ہے ۔ ایک درجن ممالک میں حکمرانوں کے دس ارب ڈالرز کے کارخانے، سپر مارکیٹس، پلازے اور محلات ہیں ۔یہ انڈین سرمایہ کار ٹاٹا اور برلاس بننے کے خواب دیکھ رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ 50ہزار معصوم شہریوں کو ہلاک کرنے والوں سے مذاکرات قوم سے دھوکہ ہیں ۔ماورائے قانون دہشت گرد قیدیوں کی رہائی بارے قوم کو بتایا جائے ۔ڈاکٹر طاہر القادری نے کہاکہ حکمرانوں کی بیڈ گورننس کی حالت یہ ہے کہ ایک درجن سے زیادہ ممالک میں پاکستانی سفارت خانوں میں سفیروں اور ہائی کمشنروں کی خالی اسامیاں حکمرانوں کے وفاداروں کی منتظر ہیں۔ کرپٹ حکمران پاکستان میں خاندانی بادشاہت قائم کرنا چاہتے ہیں ، اس وقت حکمران گھرانے کے 20افراد اس حکومت کو چلا رہے ہیں۔