مقبول خبریں
دار المنور گمگول شریف سنٹر راچڈیل میں جشن عید میلاد النبیؐ کے حوالہ سےمحفل کا انعقاد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ہمیں دہشت کا سامنا ہے، ملکہ برطانیہ کی 30 سال پرانی تقریر منظرعام پر آ گئی
لندن... آج سے تیس سال قبل جنگ عظیم کے خدشے کے پیش نظر ملکہ برطانیہ نے اپنے عوام کے لئے ایک خصوصی پیغام تیار کیا تھا جو اب منظر عام پر آیا ہے جس میں ملکہ نے برطانوی عوام کو ایٹمی جنگ کی صورت میں متحد اور پْرعزم رہنے کی تلقین کی تھی ..وائٹ ہال کے حکام کی طرف سے سرد جنگ کے مشکل ترین دور میں تیار کردہ یہ تقریر نہ تو کبھی باقایدہ ریکارڈ کی گئی اور نہ ہی نشر ہوئی تھی۔ اس فرضی تقریر کے متن کے مطابق برطانوی ملکہ نے اس وقت ’بہادر ملک‘ کو درپیش خطرے کو تاریخی قرار دیا تھا۔ حکومت نے اس دستاویز کو 30 سال بعد سرکاری معلومات عام کرنے کے قانون کے تحت عوامی سطح پر جاری کیا ہے۔ اگرچہ یہ صرف ایک مشق ہی تھی لیکن ملکہ کے خطاب کو اس طرح لکھا گیا تھا کہ یہ جمعہ چار مارچ 1983 کی دوپہر کو نشر ہو۔ اس خطاب میں قوم کو تیسری عالمی جنگ کے دوران پیش آنے والے شدید مشکلات کے لیے تیار کرنا تھا۔ ملکۂ برطانیہ کے فرضی تقریر کے متن کے میں لکھا ہے: ’اب جنگ کا پاگل پن دنیا میں مزید پھیل رہا ہے اور ہمارے بہادر ملک کو دوبارہ شدید مسائل کا سامنا کرنے کے لیے ضرور تیاری کرنی چاہیے۔ ’ہمیں دہشت کا سامنا ہے۔ جن خصوصیات کی بدولت ہم نے اس اداس صدی میں دو دفعہ اپنی آزادی کو قائم رکھا، وہی اقدار ایک بار پھر ہماری طاقت ہوں گی۔ خطاب میں ایک ذاتی بات کرتے ہوئے کہا گیا: ’میں اور میرے شوہر ملک کے تمام خاندانوں کا ملک کی خدمت میں گئے اپنے بیٹوں، بیٹیوں، شوہروں اور بھائیوں کے لیے خدشات میں شریک ہیں۔ میرا پیارا بیٹا اینڈریو اس وقت اپنے یونٹ کے ساتھ میدانِ جنگ میں ہے۔ ہم ان کی اور ملک کے اندر اور باہر فوجی خدمات دینے والے تمام مرد و خواتین کی حفاظت کے لیے مسلسل دعاگو ہیں۔