مقبول خبریں
اولڈہم کے نوجوانوں کی طرف سے روح پرور محفل، پیر ابو احمد مقصود مدنی کی خصوصی شرکت
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
لوٹن میں ختم نبوت کے نفاذ اور منفی سرگرمیوں کو محدود کرنے کے حوالے سے کمیٹی کا قیام
لوٹن ... علما کرام کے ایک وفد نے لوٹن آن سنڈے کی انتظامیہ سے ملاقات کی اور ختم نبوت بارے انکے شائع شدہ لٹریچر پر اپنے تحفظات سے انہیں آگاہ کیا۔ تفصیلات کے مطابق اتوار کی اشاعت میں لوٹن کے اس مقبول اخبار نے دو صفحات پر مشتمل لٹریچر شائع کیا اس پر ایک ہنگامی اجلاس بلایا گیا اور آنئندہ کا لائحہ عمل ترتیب دیا گیا۔ جامعہ اسلامیہ غوثیہ میں ہونے والے اجلاس میں لوٹن کی تمام مساجد کے آئمہ اور مساجد کی انتظامیہ کمیٹیوں کی بھرپور نمائندگی موجود تھی اور لوٹن ماسک کونسل کے بھی رہنما موجود تھے۔ ہنگامی طور پر بلائے گئے اجلاس میں لوٹن کے ایک اخبار میں منکرین ختم نبوت کی طرف سے جاری کردہ ایک صفحاتی مضمون کی سخت مذمت کی گئی ہے اور اس مضمون کو اسلام اور مسلمانوں کے خلاف گمراہ کن پروپیگنڈا اور اسلام کو منفی انداز میں پیش کی جانے کی جسارت سے تعبیر کیا جس کے ذریعہ تمام مسلمانوں کے جذبات کو شدید مجروح کیاگیا ہے۔ اجلاس کے تمام شرکاء نے متفقہ طور پر اس اہم معاملے پر بھرپور ردعمل کے اظہار اور فوری طور پر ایکشن لینے اور عقیدہ ختم نبوت اور تحفظ ناموس رسالت کیلئے تمام مکاتب فکر کے علماء کرام اور زعماء پر مشتمل تحفظ ختم نبوت فورم قائم کیا اور لوٹن کے تمام علمائے کرام مساجد کمیٹیوں جس میں تمام مکاتب فکر کی بھرپور نمائندگی ہوگی ایک سات رکنی ایکشن کمیٹی کے قیام کا اعلان کیا جو ہنگامی اور فوری طور پر اقدامات کرتے ہوئے عقیدہ ختم نبوت کے تحفظ کے لئے ضروری پروگرام ترتیب دے گی۔ اجلاس کا آغاز مولانا حافظ محمد عمر نذیر کی تلاوت قرآن اور الحراء سنٹر کے خطیب علامہ پروفیسر مسعود اختر ہزاروی کی نظامت سے شروع ہوا علامہ حافظ محمد اعجاز خطیب جامع مسجد غوثیہ نے اپنے استقبالیہ خطاب میں کہا کہ عقیدہ ختم نبوت پر کامل و اکمل ایمان ہی ہمارے ایمان کا حصہ ہے جس کا تحفظ ہر مسلمان کا اولین فرض اور ذمہ داری ہے۔ اور اس ذمہ داری سے عہدہ برآ ہونے کیلئے مکمل اتحاد وقت کی اہم ضرورت ہے۔ جامعہ اسلامیہ غوثیہ لوٹن کے خطیب علامہ قاضی عبدالعزیز چشتی نے کہا کہ عقیدہ ختم نبوت پر مکمل ایمان پوری امت مسلمہ کا اجماعی عقیدہ ہے اس کا تحفظ ہر کلمہ گو مسلمان کی اولین زمہ داری ہے۔ انہوں نے اس مقوع پر بہت اہم تجاویز بھی پیش کیں جنہیں تمام شرکاء نے سراہتے ہوئے ان پر عمل کرنے کی تائید کی۔ جامعہ الاکبریہ کے خطیب علامہ قاری واجد حسین چشتی نے کہا کہ عقیدہ ختم نبوت جو قرآن کی نصوصِ قطیعہ سے ثابت ہے اور نبی کریم کی احادیث صحیحہ میں بھی اس کی صراحت موجود ہے۔ اس پر کاربند رہنے میں ہی ہماری نجات اور بخشش ہے اور آج کا یہ اہم اجلاس دورس نتائج کا حامل ہوگا۔ ختم نبوت یوتھ گروپ کے چیئرمین عبدالمتین مغل نے کہا کہ ختم نبوت کا عقیدہ عقائد اسلامیہ کا اہم رکن ہے۔ اس کی حفاظت ہی ایک بندۂ مومن اور عاشق رسول کی ذمہ داری ہے اور اس ضمن میں نوجوانوں کی ذمہ داریاں بڑھ جاتی ہیں۔ جامع مسجد صفۃ السلام براڈلی روڈ کے امام مولانا محمد بنیامین اور راجہ محمد فیصل کیانی نے کہا کہ عقیدہ ختم نبوت سے نوجوان نسل اور بالخصوص بچوں کو آگاہ کرنے کیلئے انگلش زبان میں لٹریچر اور مساجد اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ مساجد کو ختم نبوت کے مضامین بھی نصاب و سلیبس کا ضرور حصہ بنانا چاہیئں۔ لوٹن فیتھ گروپ کے چیئرمین پروفیسر راجہ ظفر خان نے کہا کہ سکولوں، کالجز، یونیورسٹی کے طلباء سے رابطے قائم کرکے وہاں بھی ختم نبوت یوتھ گروپ قائم کرنے چاہیئں تاکہ اس راسخ عقیدے کی صحیح معنوں میں تشہیر ہوسکے۔