مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
اسلامی اقدار کی پاسداری میں ہی آنے والی نسلوں کی بقا ہے: پروفیسر ڈاکٹر پیر ساجد الرّحمن
کیتھلے ...صوفیائے کاملین نے دین، اعمال اور عقائد کے معاملے میں کبھی سمجھوتہ بازی نہیں کی اور تاریخ ِ اسلام اِس بات کی شاہدِ ہے کہ ہر دَور میں صوفیاء کی جماعت نے کبھی شاہانِ زمانہ کی پروا نہ کی۔ ان خیالات کا اظہار عالمِ اسلام کی عظیم علمی شخصیت پروفیسر ڈاکٹر پیر ساجد الرّحمن سجّادہ نشین آستانہ ء عالیہ نقشبندیہ مجدّدیہ بگھار شریف ، سابق ڈائریکٹر دعوہ اکیڈمی نے انجمن محبین ِ مشائخ بگھار شریف برطانیہ کے زیرِ اہتمام خطہء پوٹھوہار کی عظیم روحانی شخصیت حضرت خواجہ مولانا محمد یعقوب بگھاروی ؒ کے پندرھویں سالانہ مرکزی عُرس کے موقع پر کیتھلے ویسٹ یارکشائر میں اپنے صدارتی خطبے میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ صوفیہ نے حُسنِ خلق ، محبت ، رواداری اور باہم احترام کا عملی درس دیا اور اُسوئہ رسول ؐ کی پیروی اور خلقِ محمدیؐ کو اپنانا تصوّف اور روحانیت کی تعلیمات کا نچوڑ ہے ۔ سرورِ کائنات محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اپنا تعلق ِ غلامی مضبوط تر کرنا ہوگا۔ اُسوہ رسول ؐ پر عمل پیرا ہوکر ہی ہم اپنی اسلامی روایات و اقدار کی پاسداری کر سکتے ہیں اور یہی ہماری اور ہماری آنے والی نسلوں کی بقا و سلامتی ضامن ہے۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مہمانِ خصوصی پیر محمد حبیب الرّحمٰن محبوبی نے کہا کہ ہمیں صوفیاء کے نقشِ قدم پر چل کر قرب ِ خداوندی کی منازل کی جستجو کرنے ہوگی ۔ جامعہ الکرم نوٹنگھم کے بانی و مہتمم مفسّرِقرآن علامہ پیر زادہ محمد امدادحسین نے کہا کہ صاحبِ عُرس ان شخصیات میں سے ہیں جن کا ذکر نزولِ رحمت ِ خداوندی کا سبب ہوا کرتا ہے اور جن کے حُسنِ عمل و حسنِ تربیت کو دیکھ کر اغیاربھی اسلام کی عظمت کے معترف ہوئے۔مولانا ظفر محمود مجدّدی نے کہا کہ خواجگانِ بگھار شریف نے سُنتِ مطہّرہ اور شریعتِ طیّبہ کی پاسداری کی اور لوگوں کے دلوں میں محبت و اطاعتِ رسول ؐ کے جذبے کو موجزن کیا ۔ مُمتاز عالمِ دین مو لانا مفتی محمد انصر القادری نے کہا کہ صوفیائِ کاملین کی مبارک زندگیاں حدیثِ طیبہ کا عملی نمونہ تھیں ۔مولانا محمد عمر حیات قادری نے کہا کہ صوفیہ نے اپنی محافل میںمخلوقِ خدا کے قلوب و اذہان کی تطہیر کی ہے اور یہی ان مجالسِ عرس کا مقصد اور ہدف ہوتا ہے۔ مولانا حافظ نعمت علی چشتی نے کہا کہ اولیاء اللہ کی صحبت اور محبت سے انسان کو صالحیت و تقوٰی کی دولت ِ لا زوال نصیب ہوتی ہے ۔ چوہدری خادم حسین لارڈ میئر بریڈفورڈ نے کہا کہ صوفیاکر ام نے اسلام کا صحیح نمونہ پیش کیا اور ہم پر بھی لازم ہے کہ ہم اُن کے اتباع میں امن و سلامتی، محبت، رواداری اور برداشت اور حسنِ اخلاق کا عملی نمونہ پیش کریں۔ ، حاجی محمد منیر صدر انجمن محبین مشائخ بگھار شریف برطانیہ نے انجمن کے نگرانِ اعلیٰ اور آستانہ عالیہ بگھار شریف کے دیرینہ خادمِ خاص حاجی محمد نذیر مرحوم کی وفات پر گہرے رنج و افسوس کا اظہار کیا اور تعزیتی قرارداد پیش کی۔ تقریب میں صاحبزادہ محمد دائود، محمد افضل سلطانی، ، حافظ عبد القادر نوشاہی، صوفی طارق محمود، قاری محمد سمندر خان، عامر انور فریدی، میلاد رضا قادری ، اسمٰعیل حسین ،حافظ ناصر محمود، آصف طاہر گولڑوی، انیس محمود، محمد کلیم، عدیل محمود، توقیر محمود، محمد فیضان عرفانی، بابر حسین، عابد حسین چشتی، خلیفہ صوفی جاوید اقبال اور حسیب اخلاق نے بارگاہِ رسالت مآب ؐ میں ہدیہ ہائے عقیدت پیش کیے۔ معروف عالمِ دین مولانا محمد دین سیالوی ، صاحبزادہ سیّد شفقات احمد ، مولانا ساجد محمود فراشوی اور طارق مجاہد جہلمی نے بھی محفل میں شرکت کی۔