مقبول خبریں
اولڈہم ٹاؤن میں پہلی جنگ عظیم کی صد سالہ تقریب،جم میکمان،مئیر کونسلر جاوید اقبال و دیگر کی شرکت
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیر بارےممبر پارلیمنٹ کی بات کو شوشہ قرار دینا ایوان کی توہین اور کشمیریوں کی دل آزاری ہے
راچڈیل...ممبر آف پارلیمنٹ سائمن ڈینزک نے کشمیریوں کی شاخت کو تسلیم کروانے بارے جو موقف اختیار کیا گیا ہے وہ نوے سے زائد کشمیریوں کی آواز ہے اور ہم انکے اس موقف کی مکمل حمایت کرتے ہیں اور انہیں زبر دست الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہیں،یہ باتیں جموں و کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی یو کے کے نائب صدر ظہیر خان، لنکا شائر زون کے صدر طارق کامریڈ، رقیب کشمیری، راجہ صغیر خان اورکونسلر افتخار احمد نے ایک مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران کیں،انہوں نے کہاکہ نجی ٹی وی پر شوشے کا لفظ استعمال کر کے کشمیر کے مسئلے کو سبو تاژ کرنے کی گھنائونی سازش کی گئی ہے اور یہ سچی صحافت کو کاری ضرب لگانے کے مترادف ہے،انہوں نے کہا کہ نجی ٹی وی کو ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے اور مسئلہ کشمیر جیسے حساس معاملے بارے رپورٹنگ کرتے وقت زمینی حقائق کو مد نظر رکھنا چاہیے اور ہمارا مطالبہ ہے کہ متعلقہ ادارہ اس بارے چھان بین کرے کہ ایسا دانستہ طور پر کیا گیا یا پھر غیر دانستہ،انہوں نے کہا کہ جو عناصر کشمیری شناخت کی مخالفت کر ر رہے ہیں دراصل وہ پاکستان کیلئے مشکلات میں اضافہ کر رہے ہیں،کشمیری قوم کی تاریخ چھ ہزار سال پر محیط ہے اسے شوشہ سے تشبیہ دینا قابل مذمت فعل ہے اور ٹی وی پر جانبدارانہ رپورٹ نشر کی گئی،حالانکہ دوسروں کا موقف لیا گیا لیکن اسے کاٹ دیا گیا،انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیر کے صدر سردار محمد یعقوب نے بھی کہاہے کہ اگر کشمیریوں کو شناخت مل رہی ہے تو اس میں کیا حرج ہے،آخرمیں انہوں نے کشمیر کی شناختی مہم چلانے والے احباب کی حمایت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ انکی جماعت مل کر اس مہم میں حصہ لے گی،کشمیری شناخت مہم کے کو آرڈینیٹر کونسلر عدالت علی،جنرل سیکرٹری ممتاز کشمیری،دانشور شمس الرحمٰن اور ایپٹا کے جنرل سیکرٹری ندیم اسلم نے مشترکہ طور پر کہا کہ غلط رپورٹنگ کی وجہ سے مسئلہ کشمیر کو نقصان پہنچ سکتا ہے اور میڈیا کا ایک ادار ہ اسکا ذمہ دار ہے انہوں نے کہا کہ جس طرح سندھ کے باشندوں کی پہچان سندھی ہے بلوچ کی بلوچی اور پنجاب والوں کی پنجابی اسی طرح کشمیریوں کی پہچان بھی کشمیری ہے اور ہمیشہ کشمیری ہی رہے گی،کچھ عناصر اپنے مذموم مقاصد کے حصول کیلئے حقیقت سے چشم پوشی کر کے اپنے آقائوں کو خوش کرنے کیلئے ایسا کر رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ ہائوس آف کامنز اور کورٹس بارے غلط رپورٹنگ رولز کی خلاف ورزی ہے اور اس سے ممبر آف پارلیمنٹ سائمن ڈینزک کا استحقاق مجروح ہوا ہے اس کا ازالہ کیا جائے،انہوں نے کہا کہ ہم انکی بھرپور حمایت کرینگے کیونکہ سائمن ڈینزک کشمیریوں کی آواز کو ایوان بالا میں پہنچا رہے ہیں اس حوالے سے کمیونٹی کی بھی ذمہ داری ہے کہ وہ اس بارے میں آواز بلند کریں اور اپنے علاقے کے مقامی ممبر آف پارلیمنٹ سے رابطہ کر کے اس بارے بات چیت کریں۔