مقبول خبریں
آشٹن گروپ کی جانب سے پوٹھواری شعر و شاعری کی محفل،شعرا نے خوب داد وصول کی
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کرکٹ میچ میں ہار کا بھارتی غصہ، چھ مزید طلبہ کو پاکستان کی حمائت پر اخراج کا سامنا
نوئیڈہ ... ایشیا کپ میں کشمیری طلبہ کی طرف سے پاکستانی ٹیم کو داد دینے پر بھارتیوں کا غصہ ابھی ٹھنڈا نہیں ہوا، بھارتی میڈیا کے مطابق اترپردیش کی ایک نجی تعلیمی درسگاہ میں سال اول کے چھ طلبا کو اسی جرم کی پاداش میں ادارے سے بے دخل کردیا گیا ہے۔ ان چھ میں سے چار کشمیری جبکہ دو علی گڑھ سے تعلق رکھنے والے مسلمان ہیں۔ ان پر گزشتہ ہفتے پاکستان اور ہندوستان کے درمیان کرکٹ میچ میں ٹیموں کی حمایت کرنے اور اس پر لڑائی جھگڑے کے الزامات ہیں۔ ٹائمز آف انڈیا کے مطابق یہ معاملہ اس وقت گھمبیر ہوگیا جب یونیورسٹی کے ایک طالبعلم نے ایک سوشل میڈیا ویب سائٹ پر مطالبہ کیا کہ ان طالبعلموں کیخلاف کارروائی ہونی چاہئے جنہوں نےمبینہ طور پر پاک و ہند کے درمیان ہونے والے ایشیا کپ میچ میں پاکستان کی حمایت کی تھی۔ اس کے بعد طالبعلموں میں اشتعال پھیل گیا اور یونیورسٹی انتظامیہ نے معاملہ بگڑنے پر مجاز اتھارٹی کو طلب کرلیا۔ ابتدائی رپورٹ میں تحریر کیا گیا ہے کہ بعض طالبعلم میچ کے دوران پاکستانی ٹیم کیلئے خوشی کا اظہار کررہے تھے اور اس کیخلاف دیگر طلبا گروہوں نے احتجاج کیا ہے۔ یہ معاملہ حل ہوگیا تھا لیکن پانچ مارچ کو ایک طالبعلم نے سوشل میڈیا ویب سائٹ پر اشتعال انگیز بیان پوسٹ کی اور کہا کہ کیمپس میں سبھارتی یونیورسٹی جیسا رد عمل دیکھنے میں کیوں نہیں آرہا۔ جس پر اکثریتی طلبہ طیش میں آگئے اور جھگڑا بڑھ گیا۔ اس کے بعد یونیورسٹی نے اپنی جانب سے انکوئری شروع کردی۔ طالبعلموں کو 15 دن کے اندر ہوسٹل سے بھی بے دخل کردیا جائے گا۔