مقبول خبریں
دی سنٹر آف ویلبینگ ، ٹریننگ اینڈ کلچر کے زیر اہتمام دماغی امراض سے آگاہی بارے ورکشاپ
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
جس لڑکی نے خواب دکھائے وہ لڑکی نابینا تھی!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ایم کیو ایم سے باقاعدہ اتحاد نہیں ہوا.. عمران خان شرمندگی مٹانے کیلئے بے سروپا باتیں کر رہے ہیں
لاہور...صوبائی وزیرقانون و بلدیات رانا ثناءاللہ نے کہا ہے کہ ایم کیو ایم سے باقاعدہ اتحاد ہوا ہے اور نہ ہی ان کو وفاقی کابینہ میں شامل کیا جا رہا ہے، صرف صدارتی انتخاب کے لئے ووٹ مانگا ہے، پنجاب میں سپریم کورٹ کے احکامات کے مطابق بلدیاتی نظام کی منظوری اور بلدیاتی انتخابات کرائے جائیں گے، پیپلزپارٹی کو صدارتی انتخاب میں واضح شکست نظر آئی جس کے بعد بہانہ بنا کر وہ صدارتی انتخاب کا بائیکاٹ کر گئے، عمران خان اپنے سیاسی مستقبل کو مخدوش دیکھ کر منفی سیاست کررہے ہیں اور انتخابات میں شکست کے بعد اپنی شرمندگی مٹانے کیلئے ایسی بے سروپا باتیں کر رہے ہیں جن کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں- ممنون حسین کے صدر بننے سے وفاق مزید مضبوط ہوگا۔ عمران خان کو خیبرپی کے، کے انتخابی نتائج قابل قبول ہیں ‘سندھ میں بھی انہیں انتخابی نتائج کے حوالے سے کوئی بڑی شکایت نہیں۔ بلوچستان کے انتخابی نتائج کی وہ بات ہی نہیں کرتے جبکہ پنجاب میں اپنی عبرتناک شکست کو وہ دھاندلی کے شور میں چھپانا چاہتے ہیں۔ رانا ثناءاللہ نے کہا عمران خان کو اب اس بات کا خوف کھائے جا رہا ہے کہیں انکے پارٹی کارکن انہیں چھوڑ کر بھاگ نہ جائیں اسلئے یہ اپنے کارکنوں کو طفل تسلیاں دینے کیلئے ایسی باتیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا عمران خان الیکشن سے پہلے خوابوں کی دنیا میں رہتے تھے لیکن انتخابات کے نتائج کے بعد ان کی آنکھیں کھل گئی ہیں اور اب وہ اپنی خفت مٹانے کے لئے دھاندلی کے الزامات عائد کر رہے ہیں۔انہوں نے عمران کو مشورہ دیا انہیں اپنی جماعت کے اندر ان سوداگروں کی نشاندہی کرنی چاہیے جنہوں نے تحریک انصاف میں پارٹی ٹکٹ دینے اور تبدیل کرنے کیلئے کرپشن کا جمعہ بازار لگایا ہوا تھا۔ انہوں نے کہا عمران خان کو اس ضمن میں ثبوت حاصل کرنے میں مشکل پیش آئے تو میں یہ ثبوت فراہم کرنے کو تیار ہوں۔