مقبول خبریں
یورپین مسلم کونسل کے صدر میاں عبد الحق اور یو کے اسلامک مشن محمد صادق کھوکھر کا ناروے پہنچنے پر والہانہ استقبال
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مسئلہ کشمیر حل کرنے کے سلسلے میں برطانیہ ، امریکہ سے بات کرسکتا ہے: بیرسٹر سلطان
ناٹنگھم ... سابق وزیر اعظم آزاد کشمیر بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے کہا ہے کہ اس وقت برطانوی و یورپی پارلیمنٹ کے درجنوں ممبران مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے کشمیریوں کی عملی مدد پر آمادہ ہیں اس موقع کا بھرپور فائدہ اٹھانا چاہیئے اور برطانیہ و یورپ میں مقیم کشمیریوں کو اپنے اپنے حلقہ انتخاب سے ممبر پارلیمنٹ تک رسائی حاصل کرکے اس امر کو یقینی بنانا چاہئے کہ وہ پارلیمنٹ میں بحث کی صورت میں انکے موقف کی بھرپور تائید کریں گے۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے ناٹنگھم میں ایک استقبالیہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔تقریب کی صدارت چوہدری یوسف آف دھنہ نے کی جبکہ اس موقع پر ضیاء الحق گورسی، راجہ منشی، سابق صدر پی پی برطانیہ چوہدری زمان، زر خان اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔ بیرسٹر سلطان محمودچوہدری نے کہا ہے کہ برطانیہ کے پاکستانیوں اورکشمیریوں نے پہلے بھی مسئلہ کشمیر کو اٹھانے کیلئے اہم کردار ادا کیا ہے اور اب جبکہ مسئلہ کشمیر فیصلہ کن اور اہم موڑ میں داخل ہو چکا ہے تو ان کا یہ فرض بنتا ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو بھرپور انداز میں اجاگر کرنے کیلئے اپنا اہم کردار ادا کریں،میں سمجھتا ہوں کہ میں نے برطانیہ میں اپنے طالب علمی کے زمانے میں اس سلسلے میں جو کردار ادا کیا آج اس کا پھل مل رہا ہے انہوں نے کہا یہاں پر مقیم اپنی کمیونٹی کے لوگوں کے مسائل کے حل،مسئلہ کشمیر اور استحکام پاکستان کیلئے اپنا رول ادا کریں اور اب وقت آگیا ہے کہ یہاں پر مقیم کشمیری و پاکستانی مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اپنی تمام توانائیاں صرف کریں۔ ۔بیرسٹر سلطان نے کہا کہ اب جبکہ ممبران پارلیمنٹ نے بھی یہاں برطانیہ کی حکومت کو بھی مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے اپنا کردار ادا کرنے کے لئے کہا ہے تو اب یہاں پر مقیم کشمیریوں کا بھی یہ حق بنتا ہے کہ وہ مسئلہ کشمیر کو اجاگر کریں کیونکہ دنیا اب کشمیریوں کی آواز سننا چاہتی ہے ۔ اس سلسلے میں برطانیہ ایک اہم ملک ہے کیونکہ عالمی سپر پاور امریکہ جو بھی قدم اٹھاتا ہے وہ برطانیہ سے ضرور مشورہ کرتا ہے لہٰذا مسئلہ کشمیر حل کرنے کے سلسلے میں برطانیہ ، امریکہ سے بات کرسکتا ہے۔ دریں اثناء اس سے قبل بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے برمنگھم سولی ھل میں واقع بیرسٹر کرامت چوہدری کی رہائش گاہ پراظہار تعزیت کرنے والوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ قائد ملت چوہدری نورحسین کوزبردست خراج تحسین پیش کرنے کابہترین طریقہ ہے کہ انکی عوامی خدمت کے مشن کوجاری رکھا جائے۔ میرے لئے بڑا مشکل وقت تھا۔ایک طرف والد محترم کی چند ہفتے قبل جہان فانی کیطرف کوچ کرجانا اور دوسری طرف والد محترم کا مشن۔ مجھے وہ وقت یاد آتا ہے کہ جب اعلیٰ تعلیم کے بعد وطن واپس گیا توانہوں نے مجھے سیاسی جانشین بنایا، انکی خوشی کی انتہا نہ تھی۔ اظہار تعزیت کرنے والوں میں پاکستان پیپلز پارٹی مڈلینڈ کے صدر چوہدری خادم حسین چوہدری محمد حنیف، چوہدری لیاقت، ساجد یوسف، چوہدری عبدالغفور کھاڑک، چوہدری محمدآفیسر، ناظم گجر، چوہدری پرویز شامل تھے۔