مقبول خبریں
برطانیہ کے ابھرتے ہوئے گلوکار عثمان فاروقی کے گانے جلوہ نے دنیا بھر میں دھوم مچا دی
پیپلزپارٹی کے رہنما ندیم اصغر کائرہ کی پریس کانفرنس ،صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیئے
واجد خان ایم ای پی کا آزاد کشمیر سے آئے حریت کانفرنس کے رہنمائوں کے اعزاز میں عشائیہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
راجہ نجا بت حسین کی صدر آزاد کشمیر سردار مسعود اور وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر سے ملاقات
دسمبر بے رحم اتنا نہیں تھا!!!!!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
جامعہ محی الاسلام صدیقیہ میں چوہدری صحبت علی کی برسی پر روحانی تقریب کا انعقاد
اولڈہم ...جامعہ محی الاسلام صدیقیہ میں آزاد کشمیر کی بزرگ اور سیاسی شخصیت چوہدری صحبت علی مرحوم کی سالانہ برسی کے موقع پر ایک روحانی تقریب کا انعقاد کیا گیا، نظامت کے فرائض ادارہ ہذا کے صدر قربان حسین نے سر انجام دئیے، تلاوت قرآن پاک سے آغاز ہوا اس کی سعادت حافظ واجد الرحمٰن کو نصیب ہوئی حضور اقدس کی خدمت میں نذرانہ عقیدت کے پھول آفاق چوہدری اور ذیشان علی نے اپنی شیریں آواز میں نچھاور کئے،تقریب سے خطاب کرتے ہوئے حافظ محمد ذوالفقار صدیقی نے کہا کہ آج ہم یہاں بزرگ سیاسی و سماجی شخصیت چوہدری صحبت علی کی برسی اور آزاد کشمیر کی سیاست اور ضلع میر پور کی ہر دلعزیز شخصیت چوہدری نور حسین کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے حاضر ہیں،انہوں نے کہا کہ انسان اپنی زندگی میں کتنا ہی امیر اور طاقتور کیوں نہ ہو لیکن جو خدمات وہ غریب عوام کیلئے سر انجام دیتا ہے وہی اس کی آخرت میںبخشش کا ذریعہ بنتے ہیں اور جو کام عوامی فلاح و بہود کیلئے عین قرآن و سنت کی روشنی میں کئے جاتے ہیں وہ صدقہ جاریہ کا درجہ رکھتے ہیںاور وہ تا قیامت انسان کے اعمال نامہ میں ساتھ رہیں گے انہوں نے کہا یہ تمام صفات چوہدری صحبت علی اور چوہدری نور حسین کی شخصیات میں بہم موجود تھیں اسی لئے عوام ان کو یاد کر رہی ہے،انہوں نے مزید کہا کہ انسان تین مراحل سے گزرتا ہے،بچپن میں وہ کمزور،جوانی میں طاقتور اور جب بڑھاپا آتا ہے تو پھر کمزور ہو جاتا ہے،یہ سب قدرت کا کرشمہ ہے اور ہم سب کو بحیثیت انسان،انسانیت کی قدر کرنی چاہئے اور ہرصورت اعتدال پسندی،اصول پرستی کا دامن نہیں چھوڑنا چاہئے،آخر میں انہوں نے کہا کہ اس وقت ملک پاکستان تاریخ کے نازک ترین دور سے گزر رہا ہے ہم سب کو مل کر خدا کی بارگاہ میں دعا کرنی چاہئے کہ وہ اس آزمائش کے گرداب سے ملک کو نکال کر امن کا گہوارہ بنائے،اس روحانی تقریب میں چوہدری حاجی عبدالرحمان پھیاڑی،چوہدری شیراز رحمٰن،صحافی ندیم ارشاد،عاشق مغل،چوہدری اخلاق،چوہدری شیر زمان اور دیگر شامل تھے،اس تقریب کے منتظمین،حافظ واجد الرحمٰن اور انکے رفقاء تھےآخر میں دعائے مغفرت کی گئی اور حاضرین تقریب میں لنگر تقسیم کیا گیا۔ (بیورو رپورٹ: فیاض بشیر)