مقبول خبریں
پاکستانی کمیونٹی سنٹر اولڈہم میں بیڈمنٹن ٹورنامنٹ کا انعقاد، برطانیہ بھر سے 20 ٹیموں کی شرکت
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
طالبان جہاں کہیں گے وہیں ان سے بات کی جائے گی،عمران خان
پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان نے حکومتِ پاکستان کی جانب سے طالبان سے مذاکرات کے لیے بنائی گئی کمیٹی پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ طالبان کو اپنے نمائندے اپنی صفوں سے چننے چا ہئیں۔عمران خان کا یہ بیان ان اطلاعات کے بعد سامنے آیا ہے جن کے مطابق طالبان نے اپنی جانب سے مذاکرات کے لیے عمران خان اور مولانا سمیع الحق سمیت پانچ افراد کے نام دیے ہیں۔’طالبان جہاں کہیں گے وہیں ان سے بات کی جائے گی‘سات ماہ لاشیں اٹھائیں، امن کو آخری موقع دینا چاہتا ہوں‘ تحریکِ انصاف کی ویب سائٹ پر جاری بیان ہونے والے میں کہا گیا ہے کہ عمران خان کا کہنا ہے کہ تحریکِ طالبان پاکستان امن مذاکرات کے لیے خود اپنے طالبان نمائندے منتخب کرے بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ پاکستان تحریکِ انصاف کو حکومت کی جانب سے بنائی گئی چار رکنی کمیٹی پر پورا اعتماد ہے اور جماعت پیر کو کور کمیٹی کے اجلاس میں اپنی جانب سے تعاون کے ممکنہ طریقۂ کار پر بھی غور کرے گی۔عمران خان کے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بھی اپنے پیغام میں یہ بات دہرائی اور ٹویٹ کی کہ ’امن مذاکرت میں تحریک ِ انصاف کی جانب سے تعاون کے امکانات پر غور کرنے کے لیے پیر کو جماعت کی مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس طلب کیا گیا ہے۔اطلاعات کے مطابق طالبان کی جانب سے مذاکراتی کمیٹی کے لیے پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان کے علاوہ مولانا سمیع الحق، لال مسجد کے سابق خطیب مولانا عبدالعزیز، جمیعت علمائے اسلام کے سابق رکن اسمبلی مفتی کفایت اللہ اور جماعتِ اسلامی کے پروفیسر محمد ابراہیم کے نام سامنے آئے تھے۔اس سے پہلے پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں واقع لال مسجد کے منتظم مولانا عبدالعزیز نے بھی کہا کہ حکومت اور طالبان کی جانب سے مذاکرات کے عمل میں شامل ہونے کی پیشکش کی گئی ہے تاہم وہ اس وقت تک اس عمل میں شامل نہیں ہوں گے جب تک حکومت نظام شریعت کے نفاذ کے مطالبے پر سنجیدگی ظاہر نہیں کرتی۔دوسری جانب طالبان سے مذاکرات کے لیے قائم کی گئی حکومت کمیٹی کے رکن عرفان صدیقی نے کہا کہ صرف کمیٹی کے ارکان کو بات چیت کرنے کا مینڈیٹ دیا گیا ہے اور کمیٹی کے کسی نمائندے کی جانب سے مولانا عبدالعزیز سے کوئی رابط نہیں ہوا ہے۔مولانا عبدالعزیز نے کہا کہ سنیچر کو حکومت اور طالبان دونوں جانب سے ان سے رابطہ کیا گیا ہے۔