مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
کسی دکھی چہرے پرمسکراہٹ لانے سے بڑی عبادت کوئی نہیں، KIRF کی خدمات لائق تحسین ہیں
لندن ...کشمیر جیسا خطہ بے نظیر جو عرصے سے اپنے وجود کی تقسیم کو زخم سینے میں سجائے ایک طرف عالمی سیاحوں کو قدرتی حسن اور دوسری طرف مقامی سیاستدانوں کو نشہ اقتدار بانٹ رہا ہے۔ یہ عمل کئی دہائیوں سے جاری ہے زخم ہیں کہ بڑھتے جارہے ہیں مگر خواہشات ہیں کہ کم ہونے کا نام ہی نہیں لیتی، کسے فرصت کہ وہاں کے غم زدہ عوام کی حالت زار بارے کچھ کرے۔ ایسے میں برطانیہ میں مقیم چند مخیر حضرات نے آزاد کشمیر کے باسیوں کے چہروں پر مسکراہٹ لانے کا ایک پروگرام ترتیب دیا جسکی تفصیل برطانوی ہائوسز آف پارلیمنٹ کے کمیٹی روم میں بتائی گیئں۔ کشمیر انٹرنیشنل ریلیف فنڈ کی جانب سے منعقدہ اس تقریب کی صدارت تنظیم کے سرپرست لارڈ ایرک ایوبری نے کی جبکہ لارڈ قربان حسین کے علاوہ لارڈ اشفاق احمد، امپریل کالج کے پروفیسر ایلن فن وک ،گلوبل ہیلتھ لندن کے پروفیسر ایلیو ریبولی ،پرائمری کیئر کے سربراہ پروفیسر مجید، ڈاکٹر بی کے سنہا، انٹر پلاسٹ کے سربراہ رائل برومپٹن ہسپتال کے کنسلٹنٹ انس تھیسسٹ ڈاکٹر مارک سمتھ،انٹرپلاسٹ کے سربراہ ڈاکٹر چارلس ویوا اورسابق صدر آزاد کشمیر کے مشیر اور جموں کشمیر یونیورسٹی کے سابق وائس چانسلر ڈاکٹر زیڈ یو خان سمیت دیگر پروفیشنلز نے شرکت کی۔ اس موقع پر بتایا گیا کہ برطانیہ کے معروف سرجنز اور ڈاکٹر آزادکشمیر میں مریضوں کامفت علاج کریں گے ، اس مقصد کیلئے کم وبیش 2 درجن سینئر ڈاکٹروں اورسرجنز کی ایک ٹیم اگلے سال مارچ میں آزاد کشمیر کے دوردراز دیہات کادورہ کرے گی۔اس دورے کااہتمام آزاد کشمیر میں گزشتہ21سال سے 1000 سمائلز فار کشمیر پروگرام کے تحت خدمات انجام دینے والی ایک فلاحی تنظیم کشمیر انٹرنیشنل ریلیف فنڈ نے کیا ہے۔ لارڈ ایرک ایوبری اور لارڈ قربان حسین نے تنظیم کے سابقہ کام کو بھی سراہا اور مستقبل کی اس منصوبہ بندی پر خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ کسی دکھی کے چہرے پر مسکراہٹ لانے سے بڑی عبادت کوئی نہیں ہو سکتی، اس کام میں ان کی تمام مدد تنظیم کو حاصل رہے گی۔ پراجیکٹ کوآرڈی نیٹر ڈاکٹر عدیل اقبال نے بتایا کہ وفد 2 ہفتے تک آزاد کشمیر میں قیام کرے گا اور پیچیدہ سرجری کے حامل کم وبیش 160 مریضوں کاعلاج کرے گا جبکہ اس موقع پر برطانیہ سے لائی گئی بھاری مقدار میں دوائیں بھی مریضوں میں مفت تقسیم کی جائیں گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ نرسوں،ڈاکٹروں ،سرجنز ، انستھیسسٹ، لاجسٹیشینز اور رضاکاروں کی بھرتی کاعمل جاری ہے،انھوں نے بتایا کہ برطانیہ سے آزاد کشمیر جانے والا یہ اپنی نوعیت کاسب سے بڑا وفد ہوگا۔ ڈاکٹر زیڈ یو خان نے کہا کہ آزاد کشمیر میں شروع کیا گیا یہ کام دوسروں کیلئے مشعل راہ ہے، اس تنظیم کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ یہ آزاد کشمیر میں متعدد منصوبے پایہ تکمیل تک پہنچا چکی ہے۔ کشمیر انٹرنیشنل ریلیف فنڈ کے سربراہ اشفاق احمد نے کہا کہ میں اب تک کی پیش رفت پر بہت مطمئن اور خوش ہوں لیکن اس ضمن میں ابھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیرمیں اتنی غربت ہے کہ بعض لوگ آپریشن کرانے کیلئے سینٹرل ہسپتال تک جانے کی سکت نہیں رکھتے اس لئے ہم ان کے اپنے علاقوں میں ڈاکٹر بھیجیں گے تاکہ ایسے لوگ مفت علاج کی سہولت سے استفادہ کرسکیں۔انھوں نے کہا کہ میں پاکستان اور کشمیر سے مریضوں کی رجسٹریشن کا آغاز کرنے کیلئے جلد ہی پاکستان جاؤں گا۔