مقبول خبریں
آشٹن گروپ کی جانب سے پوٹھواری شعر و شاعری کی محفل،شعرا نے خوب داد وصول کی
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پاک برطانیہ تجارتی کانفرنس لندن میں باہمی تجارت کا حجم تین بلین پائونڈ تک پہنچانے کا عزم
لندن ... پاکستان اور برطانیہ کے آپس کے بہترین روابط اور مضبوط تعلقات کی بدولت باہمی تجارت کے وسیع مواقع موجود ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ہر سال دونوں ممالک کے درمیان سرمایہ کاری کا حجم مسلسل بڑھ رہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار یوکے ٹریڈ اینڈ انوسٹمنٹ، پاک برٹش ٹریڈ اینڈ انوسٹمنٹ فورم اور پاکستان ہائی کمیشن لندن کی مشترکہ کاوشوں سے لنکاسٹر ہاؤس لندن میں منعقدہ سالانہ فلیگ شپ کانفرنس کے شرکا نے کیا۔ کانفرنس میں برطانیہ اور پاکستان کی کمپنیوں کے 80 تجارتی نمائندوں نے شرکت کی۔ کانفرنس کامقصد پاکستان میں موجود سرمایہ کاری کے مواقع ،مارکیٹ کے اعتبار سے برطانوی کمپنیوں کو دی جانے والی سپورٹ سے سے آگاہی تھا، دن بھر مختلف وقفوں میں جاری رہنے والی اس کانفرنس میں برطانوی وزیر بیرونس سعیدہ وارثی، لارڈ لیونگسٹن، پاکستانی ہائی کمشنر واجد شمس الحسن، پاکستان میں برطانوی ہائی کمشنر ایڈم تھامپسن اور نوشینہ مبارک نے دونوں ممالک کے درمیان باہمی تجارت کے فروغ اور سابقہ کامیاب تجربات پر سیر حاصل گفتگو کی اورتین کلیدی شعبوں توانائی ، تعلیم اورریٹیل پر توجہ مرکوز رکھی۔ سینئر فارن آفس منسٹر بیرونس وارثی نے کہا کہ پاکستان کیلئے منسٹر کی حیثیت سے گزشتہ سال میں نے پاکستان کادورہ کیاتھا،میں حال ہی میں برطانیہ کے تجارتی نمائندوں کے ہمراہ لاہوراور اسلام آباد بھی گئی تھی،جہاں میں برطانیہ اور پاکستان کے درمیان ہونے والی مختلف النوع تجارت اوروہاں تجارت کے مواقع کو دیکھ کر دنگ رہ گئی ۔آج کی یہ کانفرنس پاکستان میں موجود تجارتی مواقع اور پاکستان اور برطانیہ کے درمیان زیادہ تجارتی رابطوں سے آگاہ کرنے کی جانب اہم قدم ہے،انھوں نے کہاکہ مستقبل کے بارے میں بہت سی مثبت باتیں ہیں،مجھے خوشی ہے کہ یورپی پارلیمنٹ نے گزشتہ ہفتے پاکستان کو جنرلائزڈ سکیم آف پریفرنس پلس کی حیثیت دینے کی منظوری دیدی ہے ۔ برطانیہ پاکستان کو یہ حیثیت دلوانے کیلئے انتھک کوششیں کرتا رہا ہے۔ اور دوطرفہ تجارت کیلئے زیادہ مواقع فراہم کرے گا۔ تجارت اور سرمایہ کاری سے متعلق منسٹر لارڈ لونگسٹن نے کہا کہ 2012 میں دوطرفہ تجارت 2.1بلین پونڈ تک پہنچ گئی یہ اس بات کی علامت ہے کہ ہم صحیح سمت میں پیش رفت کررہے ہیں۔لیکن اس بات کویقینی بنانے کیلئے کہ پاکستان اور برطانیہ اس پارٹنر شپ سے حقیقی معنوں میں مستفیض ہوسکیں ابھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے، ہمارے دونوں ملکوں کے وزرائے اعظم نے باہمی تجارت کو 2015 تک 3 بلین ڈالر تک پہنچانے پر اتفاق کیا ہے۔ آج کی اس تقریب سے پاکستان اور برطانیہ میں موجود تجارتی مواقع کے بارے میں آگہی ہوگی جس سے نئے تعلقات پیداہوں گے اور برآمد کرنے والوں کے خواہاں تاجروں کو حکومت کی جانب سے فراہم کی جانے والی سپورٹ کے بارے میں معلومات فراہم کی جائیں گی۔ پاکستان کے ہائی کمشنر واجد شمس الحسن نے اس موقع پر اپنی تقریر میں کہاکہ پاکستان اوربرطانیہ کے درمیان تاریخی تجارتی تعلقات موجودہیں پاکستان میں 100 سے زیادہ برطانوی کمپنیاں کام کررہی ہیں، تعلیم ، اقتصادی فروغ ، ترقی ،ثقافتی تعاون ،سیکورٹی اور تعلیم کے شعبے سمیت تمام تر شعبوں میں برطانیہ کے ساتھ پاکستان کے دوطرفہ تعلقات میں اضافہ ہورہا ہے ۔ مجھے یقین ہے کہ اس تقریب سے پاکستان کے تجارتی اور اقتصادی تعلقات کوسمجھنے کاموقع ملے گا اور اس سے پاکستان میں تجارت کے بارے میں بہتر آگہی پیدا ہوگی، آج کی کانفرنس یورپی پارلیمنٹ کی جانب سے پاکستان کوجی ایس پی پلس کادرجہ دیئے جانے کی وجہ سے زیادہ اہمیت اختیار کرگئی ہے ، پاکستان کے ہائی کمشنر نے پاکستان کو جی ایس پی پلس کادرجہ دلوانے کیلئے برطانیہ کی جانب سے مسلسل کئی سال تک انتھک جدوجہد کئے جانے کی تعریف اور شکرگزاری کااظہار کیا،انھوں نے خاص طورپر برطانیہ کے وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون، نائب وزیراعظم نک کلیگ ،وزیرخارجہ ولیم ہیگ، رکن پارلیمنٹ الیسٹربرٹ، کابینہ کی وزیر بیرونس سعیدہ وارثی ،سابق وزیر اعظم گورڈن براؤن ،سابق وزیر خارجہ ڈیوڈ ملی بینڈاور بیرونس ایشٹن کاشکریہ ادا کیا انھوں نے خصوصی طورپر سابق وزیر تجارت لارڈ گرین محکمہ تجارت کے مستقل سیکریٹری مارٹن ڈونلے اور یوکے آئی ٹی کے سی ای او نک بائرڈ ،سوشلسٹ انٹرنیشنل کے سیکریٹری جنرل لوئس ایالا کی جانب سے پاکستان کی حمایت اور جی ایس پی پلس کادرجہ دلوانے کیلئے ان کی انتھک کوششوں پر شکریہ ادا کیا، پاکستانی ہائی کمشنر نے رکن یورپی پارلیمنٹ سجاد کریم کا بھی شکریہ ادا کیا جنھوں نے گزشتہ برسوں کے دوران برسلز میں یورپی رکن پارلیمنٹ کو پاکستان کی حمایت پر آمادہ کرنے کی کوششیں کیں، واجدشمس الحسن نے پاکستان کی معیشت کی بحالی کیلئے انتھک محنت اور کوششیں کرنے پرپاکستان میں سبکدوش ہونے والے برطانوی سفیر ایڈم تھامسن کی کو زبردست خراج تحسین پیش کیا اور انہیں پاکستان کاحقیقی دوست قرار دیا۔