مقبول خبریں
یورپین اسلامک سنٹر اولڈہم میں مسجد خضرا کی تزئین وآرائش کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر
پاکستان اور بھارت میں واقعی برابری کہاں ؟ ایک طرف محبت دوسری طرف نفرت
نوازشریف کی طرح باقی قیدیوں کوبھی علاج معالجے کیلئےرہا کیا جائے
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
حلقہ ِ ارباب ِ ذوق کے ادبی پروگرام میں پاکستانیوں اور کشمیری کونسلرز کی بڑی تعداد میں شرکت
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
اینڈریو سٹیفن سن سے راجہ نجابت حسین اور سردار عبدالرحمٰن کی ملاقات
سہمے ہوئے لوگوںسے بھی خائف ہے زمانہ
پکچرگیلری
Advertisement
مختلف مکتبہ فکر کے افراد کا مودی سرکار کےظلم کیخلاف پارلیمنٹ اسکوائر کے سامنے مظاہرہ
اولڈہم (محمد فیاض بشیر)مقبوضہ کشمیر میں انسانیت پر مودی سرکار کی جانب سے ڈھائے جانے والے ظلم و ستم ، پچھلے ایک ماہ سے کرفیو کی وجہ سے انسانی حقوق کی بدترین پامالیوں کے خلاف اولڈہم میں بسنے والے مختلف مکتبہ فکر کے افراد نے پارلیمنٹ اسکوائر کے سامنے ایک احتجاجی مظاہرہ کیا ۔ برطانوی پارلیمنٹ کے اراکین پر مشتمل کشمیر گروپ کی چیئر پرسن رکن پارلیمنٹ ڈیبی ابراہم، جم میکمان چرچ کے پادری ، کشمیری و پاکستانی کمیونٹی کی سیاسی سماجی کمیونٹی مذہبی شخصیات کے علاوہ خواتین اور بچوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی اور مودی سرکار کی انسانیت سوز کاروائیوں کی سخت الفاظ میں مذمت کی۔ رکن برطانوی پارلیمنٹ ڈیبی ابراہم کا کہنا تھا کہ 5اگست جب سے بھارت کی حکومت نے کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کر کے کشمیر میں کرفیو نافذ کیا ہے ان سے اظہار یکجہتی کا سلسلہ جاری ہے۔ان کا مذید کہنا تھا کہ کشمیری عوام کی موجودہ حالت زار باعث سخت تشویش ہے ان کا کہنا تھا کہ اس بات کی یقین دہانی کرنی ہے کہ برطانیہ کی حکومت اس ماہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں کشمیر کے مسئلہ کو اٹھائے ان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کا خصوصی ایلچی کشمیر بھیجیں تاکہ مستقل امن قائم ہو ان کا کہنا تھا کہ اس بات کی بھی یقین دہانی کرنی ہے کہ اقوام متحدہ امن قائم کرنے کے لیے فوج بھیجے تاکہ وہاں پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں بند ہوں ان کا کہنا تھا کہ یہ قانون کی بالادستی، جمہوریت اور انسانی حقوق کا مسئلہ ہے بھارتی حکومت کو بین الاقوامی قوانین کو ملحوظ خاطر رکھنا چاہیے۔ کونسلر عتیق الرحمٰن کا کہنا تھا کہ برطانوی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اقوام متحدہ کی سیکیورٹی کونسل کی مستقل رکنیت کی وجہ سے ہندوستان کی حکومت کو باور کروائیں کے کشمیریوں کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کی روح سے انکا پیدائشی حق خود ارادیت دیا جائے۔ سماجی و کمیونٹی شخصیت راجہ سجاول حسین کا کہنا تھا کہ ہم برطانوی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ کشمیر کے اندر بھارتی مظالم کو کروائیں کرفیو ختم کر کے کشمیریوں کی آواز سنیں۔ کونسلر شاہد مشتاق کا کہنا تھا کہ ہم مظلوم کشمیریوں کی آواز بین الاقوامی سطح تک پہنچا رہے ہیں اور ہم انکے ساتھ کھڑے ہیں ۔ کونسلر جینی ہیرسن کا کہنا تھا کہ کشمیر کی کشیدہ صورتحال کی وجہ سے سخت ذہنی اظطراب کا شکار ہیں ہمارا مطالبہ ہے کہ کشمیر کے اندر ظلم و ستم بند کیا جائے۔ نوجوان سیاسی سماجی اور کاروباری شخصیت بلال چوہدری کا کہنا تھا کہ مظاہرہ میں مختلف کمیونیٹیز و مذاہب کے لوگ شریک ہیں ہمارا مطالبہ ہے کہ ایمنسٹی انٹرنیشنل اور اقوام متحدہ وہاں جائیں اور دیکھیں کشمیر میں کیا ہو رہا ہے۔ مظاہرے میں شریک دیگر افراد کا کہنا تھا کہ سب کشمیر کی آواز بن کر باہر نکلیں ہم سب کشمیر کی آزادی چاہتے ہیں ان کا کہنا تھا کہ مسلح افواج کے لیے دعاگو ہیں کہ وہ بزور شمشیر کشمیر آزاد کروائیں اور رب العالمین کی بارگاہ اقدس میں دعا ہے کشمیری قوم کی مشکلات حل کر دے ۔ ننھے بچوں کا جوش و جذبہ اس بات کی عکاسی کرتا تھا کہ ہزاروں میل دور رہ کر بھی کشمیری قوم کی آنے والی نسلیں اب آزادی لیکر ہی دم لیں گی ۔