مقبول خبریں
روٹری کلب کے راہنما ڈاکٹر سہیل قریشی کے اعزاز میں سماجی کمیونٹی شخصیت چوہدری محمود کا استقبالیہ
پاکستان سے آئے وکلا کے اعزاز میں ورلڈ وائیڈ سالیسٹرز کے ڈائیریکٹر محمد اشفاق کا استقبالیہ
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
سابق صدر پی ٹی آئی یارکشائر اینڈ ہمبر ریجن طاہر ایوب خواجہ کا اپنی رہائش گاہ پر محفل کا انعقاد
بے نظیر بھٹو: چراغ بجھ گیا لیکن روشنی زندہ ہے
پکچرگیلری
Advertisement
پلیک گیٹ ہا ئی سکول بلیک برن میں تعینات ٹیچر کیتھرین نے روزے رکھنے شروع کر دیے
بلیک برن(محمد فیاض بشیر) پلیک گیٹ ہا ئی سکول بلیک برن میں تعینات بزنس ٹیچر کیتھرین کوتھراڈ نے جی سی ایس ای کے امتحانات میں حصہ لینے والے طلبہ و طالبات کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے ماہ رمضان میں روزے رکھنے شروع کر دیے ۔کیتھرین کا کہنا تھا کہ ہمارے سکول میں کمیونٹی کے اندر اتحاد و اتفاق مثالی ہے گو کہ وہ غیر مذہب ہیں لیکن انہوں نے فیصلہ کیا تھا کہ وہ ماہ رمضان میں روزے رکھیں گے انکا مذید کہنا تھا کہ وہ بلیک برن میں بسنے والی مسلمان کمیونٹی کے رویہ سے بے حد متاثر ہیں اور بچوں کی کارکردگی بارے والدین سے بات چیت کے لیے رکھی گئ شام کے دوران ایک فیملی نے انہیں افطاری کے لیے کھانے دینے کی درخواست کی جو انہوں نے قبول کر لی وہ اس سے بھی بے حد متاثر ہوئیں۔ ان کا کہنا تھا کہ روزہ رکھنے سے انہیں غریب لوگوں کا بھی احساس ہوا جو کھانے پینے کی اشیاء سے محروم ہیں روزے کے دورانیے میں بھوک تو نہیں لگتی لیکن پیاس کی شدت محسوس ہوتی ہے اور پھر انتہائی گرم ممالک میں بسنے والے لوگوں کے روزے کا اور زیادہ احساس ہوتا ہے۔ ان کا کہنا کہ انکے ساتھ بحثیت ٹیچر انکے ساتھ پیشہ ورانہ خدمات سر انجام دینے والی ساتھی انکی اس بارے بھرپور مدد کر رہے ہیں اور روزے رکھ کر طالبعلموں کے والدین کو یہ پیغام دینا چاہتی ہوں کہ نہ صرف انکی تعلیم بلکہ دیگر معاملات میں بھی انکے ساتھ ہوں ۔ مقامی کمیونٹی میں کیتھرین کے اس اقدام کو عزت کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے۔